021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
مال زکوۃ سےحاصل شدہ منافع کاحکم
68552زکوة کابیانزکوة کے جدید اور متفرق مسائل کا بیان

سوال

زید نےایک شخص کوزکوۃ اوردوسری نفلی صدقات کی رقم دی کہ آپ اسےکسی مستحق کودےدیں۔اس شخص نےوہ رقم اپنے کاروبارمیں لگاکرنفع کمایا۔اس کاروباراورمنافع کا شرعاکیاحکم ہے؟

o

مذکورہ بالاصورت میں یہ شخص زید کاوکیل ہے اوروکیل کےلیےموکل کی زکوۃ اورنفلی صدقات کواپنی ضرورت کےلیے  موکل کی اجازت کےبغیراستعمال کرناجائزنہیں ہے۔اس صورت میں اگراس شخص نےمال زکوۃ کو اپنے کام میں موکل کی اجازت کےبغیراستعمال کیا ہے،تواس نےگناہ کاارتکاب کیا ہے،اس پرلازم ہےکہ توبہ واستغفارکرےاور یہ رقم فوراکاروبارسےنکال لے،اس کےساتھ اس پریہ بھی لازم ہےکہ زیدسےدوبارہ اجازت لےکریہ رقم بطورزکوۃ مستحقین کودینےکااہتمام کرے،دوبارہ مؤکل سےاجازت لیےبغیراگراپنی رقم سےزکوۃ اداکی،توراجح روایت کےمطابق مؤکل کی زکوۃ ادانہ ہوگی۔

رہے وہ منافع جواس مال سےاس نےکمائےہیں،توان کاشرعی حکم یہ ہےکہ ان کوصدقہ کرنالازم ہے۔البتہ اس کی وجہ سے باقی  کاروبارپرکوئی اثرنہیں پڑےگا۔

حوالہ جات

العناية شرح الهداية (9/ 330) (ومن غصب ألفا فاشترى بها جارية فباعها بألفين ثم اشترى بالألفين جارية فباعها بثلاثة آلاف درهم فإنه يتصدق بجميع الربح، وهذا عندهما) وأصله أن الغاصب أو المودع إذا تصرف في المغصوب أو الوديعة وربح لا يطيب له الربح عندهما، الفتاوى الهندية (5/ 15) وأما شرط أدائها فنية مقارنة للأداء أو لعزل ما وجب هكذا في الكنز فإذا نوى أن يؤدي الزكاة ، ولم يعزل شيئا فجعل يتصدق شيئا فشيئا إلى آخر السنة ، ولم تحضره النية لم يجز عن الزكاة كذا في التبيين
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔