021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
ہبۃ المشاع کا حکم
70305ہبہ اور صدقہ کے مسائلہبہ کےمتفرق مسائل

سوال

                 السلام علیکم مفتی صاحب! سائلہ آئمہ سید بنت طارق سلیم جاننا چاہتی ہے کہ اسں کی والدہ کی وراثتی جائیداد 12.48 مرلہ میں سے تقریباً دو مرلہ تھی جس کا وہ مجھے سائلہ آئمہ سید کو اپنی زندگی میں اپنی بہنوں رضیہ سلطانہ، شمع کوثر (اور ان کے بچوں)، ملکہ مہر النساء کے سامنے ہبہ بھی کر چکی اور اختیارات بھی دے  چکی ہیں اور میں نے قبول بھی کیا، لیکن یہ جگہ ایسی نہ تھی کہ جس کو تقسیم کر سکتے ورنہ فائدہ سے محرومی رہتی،لہٰذا میں گھر میں اپنی خالاؤں کے ساتھ ہی اپنی والدہ کی جگہ پر رہتی رہی  ہوں۔والدہ محمودہ کوثر کی آخری وقت میں والد طارق سلیم کی ناچاقی کی وجہ سے اپنی وراثتی مشترکہ گھر میں وفات ہوئی۔اور سائلہ آئمہ سید اپنی والدہ کی حیات سے خالاؤں کے ساتھ وہیں اس آبائی گھر میں  رہتی رہی۔ اور تمام ضروریات خالاؤں نے ہی اٹھائیں۔

            اس کے بعد والد طارق سلیم نے اس بات پر کیس کر دیا کہ مجھے محمودہ کوثر کی پراپرٹی میں سے حصہ دیا جائے۔میں جاننا چاہتی ہوں کہ کیا والد کا کوئی حصہ بنتا ہے؟

ٍ          تنقیح:سائلہ سے پوچھنے پر یہ وضاحت سامنے آئی کہ وہ 2 مرلے جو مجھے میری والدہ نے ہبہ کیے تھے ان کا وہ متعین طور پر دو کمرے تھے ۔نیز وہ ہبہ بھی  کل سامان سمیت کیے گئے۔

o

ہبہ تام ہونے کے لیے ضروری ہے کہ جس چیز کا ہبہ کیا جارہا ہو ،وہ متعین   چیز ہو ،اور باقاعدہ قبضہ کراکے دی جائے ۔قبضے کے لیے اگر وہ کوئی قابل تقسیم چیز ہو اور اس کا کچھ حصہ ہبہ کیا جارہا ہو تو تقسیم کرکے دینا ضروری ہوتا ہے۔اور اگر قابل تقسیم نہ ہو یعنی کہ تقسیم  کے بعد قابل انتفاع نہ  رہے تو  تقسیم کرکے دینا ضروری نہیں ہوتا۔

            لہٰذا صورت مسئولہ میں جب  آپ کی والدہ نے 2 مرلے(جوکہ دو کمرے متعین تھے) آپ کو سب سامان سمیت ہبہ کردیے اور آپ نے اسے قبول کرکے اس پر قبضہ بھی کرلیا تو ہبہ تام ہوگیا ۔اب آپ کی والدہ کے انتقال کے بعد آپ کے والد کو ان دومرلے و سامان میں سے کچھ بھی حصہ نہیں ملے گا۔ لیکن یہ یاد رہے کہ یہ جواب آپ کی بیان کردہ صورت کے مطابق ہے ،اگر صورت حال اس سے مختلف تھی تو فتوی میں ہماری طرف سے لکھ دینے کی وجہ سے کسی دوسرے کا حصہ آپ کے لیے جائز نہیں ہوسکتا۔

حوالہ جات

وقال العلامۃ الحصکفی رحمہ اللہ:و شرائط صحتها في الموهوب أن يكون مقبوضا غير مشاع مميزا غير مشغول.(الدر المختار:5/688)
قال العلامۃ الکاسانی رحمہ اللہ:وأما ما يرجع إلى الموهوب فأنواع: ومنها أن يكون محوزا فلا تجوز هبة المشاع فيما يقسم، وتجوز فيما لا يقسم ،كالعبد والحمام والدن ونحوها.
                             (بدائع الصنائع:6/119)
                                                                                                                                                وفی الھندیۃ: وهبة المشاع فيما لا يحتمل القسمة تجوز من الشريك ومن الأجنبي، كذا في                                                                                                 الفصول العمادية. . . .لا يثبت الملك للموهوب له إلا بالقبض هو المختار، هكذا في الفصول العمادية.
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                           (الفتاوی الھندیۃ:4/377)
و فی الھندیۃ:وتصح في محوز مفرغ عن أملاك الواهب وحقوقه ومشاع لا يقسم ولا يبقى منتفعا به بعد القسمة من جنس الانتفاع الذي كان قبل القسمة كالبيت الصغير والحمام الصغير ولا تصح في مشاع يقسم ويبقى منتفعا به قبل القسمة وبعدها، هكذا في الكافي.
       (الفتاوی الھندیۃ:4/376 )
                                                و فیہ ایضا:ولو وهب دارا فيها متاع الواهب ،وسلم الدار إليه أو سلمها مع المتاع لم تصح ،والحيلة فيه أن يودع المتاع أولا عند الموهوب له ويخلي بينه وبينه، ثم يسلم الدار إليه فتصح الهبة فيها.
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                        (الفتاوی الھندیۃ:4/380)

   محمد عثمان یوسف

     دارالافتاءجامعۃ الرشید کراچی

29صفر المظفر1442ھ

n

مجیب

محمد عثمان یوسف

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔