021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
جس سامان کا ٹیکس نہ دیا گیا ہو اس کی خرید و فروخت کا عام لوگوں کے لیے حکم
70456خرید و فروخت کے احکامخرید و فروخت کے جدید اور متفرق مسائل

سوال

جس سامان کا ٹیکس ادا نہ کیا گیا ہو اس سے متعلق سوال یہ ہے کہ سامان (مثلاً جاپانی ٹائر، چائنیز سامان، چھالیہ وغیرہ) کو ایک شہر سے دوسرے شہر منتقل کرنے کے لیے کبھی کبھار رشوت دینی پڑتی ہے اور کچھ بغیر رشوت دیے اور بغیر ٹیکس ادا کیے لاتے ہیں۔ پھر کراچی میں لا کر مختلف مارکیٹوں میں بیچتے ہیں۔ کیا عام لوگوں کے لیے اس کی خرید و فروخت کی اجازت ہے؟ اور جو بیچتا ہے اس کے بارے میں کیا حکم ہے؟

o

سوال میں مذکور صورت میں چونکہ بیچا جانے والا سامان شرعاً مال ہے اور اس سے انتفاع جائز ہے، نیز سامان بیچنے والے اس کے مالک ہوتے ہیں لہذا عام لوگوں کے لیے یہ سامان خریدنا اور فروخت کرنے والے کے لیے اس کا بیچنا شرعاً جائز ہے۔

حوالہ جات

أن البيع هو تمليك مال مقابل مال على وجه مخصوص ويقسم باعتباره مطلقا إلى بيع منعقد وغير منعقد.
(درر الحکام فی شرح مجلۃ الاحکام، 1/105، ط : دار الجیل)
 
"وسئل بعض الفقهاء عن أكل الطين البخاري ونحوه قال لا بأس بذلك ما لم يضر وكراهية أكله لا للحرمة بل لتهييج الداء."
                                                                                                                                                                                                                                                 (الفتاوی الہندیۃ، 5/341، ط: دار الفکر)
 
أن جواز البيع يدور مع حل الانتفاع.
(الدر المختار و حاشیۃ ابن عابدین، 5/51، ط: دار الفکر)

محمد اویس پراچہ     

دار الافتاء، جامعۃ الرشید

تاریخ: 16/ ربیع الاول 1442ھ

n

مجیب

محمد اویس پراچہ

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔