021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
زبردستی خلع نامہ پر دستخط کاحکم
70721طلاق کے احکامالفاظ کنایہ سے طلاق کا بیان

سوال

19 نومبر  2020  کو میرے  سسرال  والے  بالخصوص   میرے  سسر سلطان  محمد  نے  مجھے ایک اسٹامپ   پیپر  پر  خلع کا حکم  نامہ پکڑا دیا ہے ، میری  اہلیہ   اب اپنے باپ کے گھر  میں  ہے ،اس خلع پر   راضی نہیں ہے ،

اب پوچھنا یہ ہے کہ اس  زبردستی   خلع کی کیا  حیثیت ہے ؟

اسلامی نقطہ  نگاہ  سے میری  رہنمائی  فرمائیں ۔

o

چونکہ  آپ نے خلع نامہ پڑھ  کر اس پر  دستخط کردیا  ہے ،اس سے ایک طلاق  بائن  واقع ہوگئی ،اور دونوں کا  نکاح  ختم ہوچکا ہے ۔ آپس کی رضامندی  سےنئے  مہر کے ساتھ  دوبارہ  نکاح  ہوسکتا ہے ۔اگر  دوبارہ  نکاح کے لئے  لڑکی راضی ہے  تو  لڑکی کے  والد کا اس میں  روکاوٹ  ڈالنا  درست نہیں ۔

حوالہ جات

{وَبُعُولَتُهُنَّ أَحَقُّ بِرَدِّهِنَّ فِي ذَلِكَ إِنْ أَرَادُوا إِصْلَاحًا وَلَهُنَّ مِثْلُ الَّذِي عَلَيْهِنَّ بِالْمَعْرُوفِ وَلِلرِّجَالِ عَلَيْهِنَّ دَرَجَةٌ وَاللَّهُ عَزِيزٌ حَكِيمٌ (228)} [البقرة: 228]
{وَإِذَا طَلَّقْتُمُ النِّسَاءَ فَبَلَغْنَ أَجَلَهُنَّ فَلَا تَعْضُلُوهُنَّ أَنْ يَنْكِحْنَ أَزْوَاجَهُنَّ إِذَا تَرَاضَوْا بَيْنَهُمْ بِالْمَعْرُوفِ ذَلِكَ يُوعَظُ بِهِ مَنْ كَانَ مِنْكُمْ يُؤْمِنُ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ ذَلِكُمْ أَزْكَى لَكُمْ وَأَطْهَرُ وَاللَّهُ يَعْلَمُ وَأَنْتُمْ لَا تَعْلَمُونَ (232) } [البقرة: 232،]

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

       دارالافتاء جامعة الرشید    کراچی

١۳ ربیع الثانی ١۴۴۲ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔