021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
مقروض دکاندار کا دوسروں سے زکوة لینے کا حکم
78086زکوة کابیانزکوة کے جدید اور متفرق مسائل کا بیان

سوال

کیا مذکورہ بالا   صورت حال  میں اس  کاروباری  مقروض بندے کو زکوة دی  جاسکتی  ہے تاکہ   یہ لوگوں  کا قرض ادا  کرسکے ؟

o

جس شخص کی ملکیت   میں   بقدر نصاب  مال ہو ﴿ یعنی   سونا  چاندی ، گھر  میں  روز مرہ     کی ضرورت  سے زائد  سامان ،تجارت کی  نیت   سے خریدا  ہو  ا مال   ان سب کی  مجموعی قیمت  لگاکراس مجموعہ  میں   نقدی  شامل کی جائے  ، تو اگر سب کی مجموعی  مالیت ساڑھے  باون   تولے  چاندی  کی  قیمت  کے برابر یا اس  سے زیادہ  ہو  تو اس پر  صدقة  الفطر  اور  قربانی لازم   ہوجاتاہے  اور﴾اس کے لئے دوسروں کی  زکوة کھانا  حرام ہے۔

لہذا مسئولہ  صورت میں  یہ  شخص   اپنی  ملکیت   میں موجود،مذکورہ  بالا پانچوں قسم کی    اشیاء  کی مجموعی  قیمت   لگاکر اس میں سے   قرض   کی رقم کو   منہا  کرکے  دیکھے ،اگر قرض منہا کرلینے کے بعدبقیہ  مال  بقدر نصاب  یا اس سے  زیادہ    ہے تو  دوسروں  سے زکوة لینا     حرام  ہوگا ،اجتناب  کرنا  لازم ہے ۔ اور  اگر  اس  کے  پاس  موجود  مال نصاب   کی مقدار سے بھی کم  رہ گیاہے توایسی صورت میں  اس کے لئے  زکوة  لینا  جائز  ہے۔پھر اس سے  قرض کی ادائیگی  اور  دیگر ضروریات  پورا کرنا  جائز   ہوگا۔

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (2/ 347)
(و) لا إلى (غني) يملك قدر نصاب فارغ عن حاجته الأصلية من أي مال كان كمن له نصاب سائمة لا تساوي مائة درهم كما جزم به في البحر والنهر، وأقره المصنف قائلا وبه يظهر ضعف ما في الوهبانية وشرحها من أنه تحل له الزكاة وتلزمه الزكاة. اهـ.
 (قوله: فارغ عن حاجته) قال في البدائع: قدر الحاجة هو ما ذكره الكرخي في مختصره فقال: لا بأس أن يعطي من الزكاة من له مسكن، وما يتأثث به في منزله وخادم وفرس وسلاح وثياب البدن وكتب العلم إن كان من أهله، فإن كان له فضل عن ذلك تبلغ قيمته مائتي درهم حرم عليه أخذ الصدقة، لما روي عن الحسن البصري قال كانوا يعني: الصحابة يعطون من الزكاة لمن يملك عشرة آلاف درهم من السلاح والفرس والدار والخدم، وهذا؛ لأن هذه الأشياء من الحوائج اللازمة التي لا بد للإنسان منها.

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

 دارالافتاء جامعة الرشید     کراچی

۵ربیع  الثا نی  ١۴۴۴ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے