021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
وسوسہ سے طلاق واقع نہیں ہوتی
73332طلاق کے احکامطلاق کے متفرق مسائل

سوال

میں اپنی بیوی سے فون پر بات کر رہا تھا اور سے بتا رہا تھا کہ کچھ الفاظ ایسے ہوتے ہین جو کنایہ کہلاتے ہیں اگر ان کے بولنے میں نیت طلاق ہو تو طلاق ہو جاتی ہے ،تو میں انے اپنی بیوی کچھ مثالیں دی مثلا ’’تم فارغ ہو، تو آزاد ہے‘‘وغیرہ۔ جب میں نے یہ الفاظ بولے تو مجھے شک ہوا کہ کہیں ان الفاظ سے طلاق تو نہیں ہوئی، اور مجھے بار بار وسوسے آ رہے ہیں کہ کہیں کچھ برا تو نہیں ہوا۔ پھر خیال آیا کہ کہیں میری نیت طلاق کی تو نہیں تھی۔ حالانکہ سیاق و سباق سے پتہ چلتا ہے کہ میں اسے بتا رہا ہوں کہ کن الفاظ سے طلاق ہوتی ہے اور کیسے ہوتی ہے۔  میری شرعی رہنمائی فرمائیں۔

o

یہ الفاظ طلاق کا مسئلہ بتانے کیلیے کہے گئے تھے نہ کہ طلاق دینے کی نیت سے کہے گئے تھے ، پھر وسوسہ پیدا ہونا شروع ہوا۔ محض طلاق کے وسوسہ یا شک  سے طلاق واقع نہیں ہوتی  ،اس صورت میں کسی قسم کی طلاق واقع نہیں ہوئی ۔ لہذا اس وہم کو مزید نہ بڑھایا جائے۔

حوالہ جات

شرح القسطلاني = إرشاد الساري لشرح صحيح البخاري (8/ 147)
عن أبي هريرة -رضي الله عنه- عن النبي -صلى الله عليه وسلم- قال: «إن الله تجاوز عن أمتي ما حدثت به أنفسها، ما لم تعمل أو تتكلم».
الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (4/ 224)
وقال الليث: الوسوسة حديث النفس، وإنما قيل موسوس لأنه يحدث بما في ضميره وعن الليث لا يجوز طلاق الموسوس.

  محمد عبدالرحمن ناصر

دارالافتا ءجامعۃالرشید کراچی

04/11/1442

‏                                           

n

مجیب

محمد عبدالرحمن ناصر بن شبیر احمد ناصر

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔