021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
قادیانی مرتد کے ساتھ لین دین کرنے کاحکم
74427ایمان وعقائداسلامی فرقوں کابیان

سوال

میر اجنرل اسٹور  ہے ، اس  میں خرید  وفروخت کا کام  کرتا ہوں ، اگر  دکاں میں  کوئی   قادیانی خرید اری کے لئے  آئے تو   اس کے ہاتھ مال فروخت کرنے کیا حکم ہےشرعا جائز  ہے  یا نہیں  ؟ آمدنی کا کیا حکم ہے ؟

o

حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم اللہ تعالی کے آخری نبی ہیں آپ کے بعد   قیامت تک کوئی نیا نبی مبعوث نہیں ہوگا ، آپ   پر ایمان لانا  ہر مسلمان کے ایمان کاضروری حصہ ہے ،آپ علیہ السلام کے علاوہ کسی اور شخص کو نیا نبی تسلیم کرنا ایمان کے منافی ہے   

                                      ( سورة  الحزاب40)          مَا كَانَ مُحَمَّدٌ أَبَا أَحَدٍ مِنْ رِجَالِكُمْ وَلَكِنْ رَسُولَ اللَّهِ وَخَاتَمَ النَّبِيِّينَ وَكَانَ اللَّهُ بِكُلِّ شَيْءٍ عَلِيمً                                                                   

دلائل النبوة للبيهقي (7/ 482، بترقيم الشاملة آليا)

وإنه سيكون في أمتي كذابون ثلاثون كلهم يزعم أنه نبي ، وإني خاتم النبيين ، لا نبي بعدي » 

قادیانی چونکہ  حضرت  محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اللہ تعالی کا آخری  نبی تسلیم کرنے کی بجائے  مرزا غلام احمد کذّاب  کو نبی مانتے ہیں، اس لئے دائرہ اسلام سے خارج ہیں ۔

تمام مسلمانوں کے  اسلامی غیرت اور حمیت کا تقاضایہ ہے کہ قادیانیوں سے میل جول نہ رکھیں ،ان کی شادی بیاہ اور دیگر خوشی اور غمی کی تقریبات  میں شرکت نہ کریں ،ان سے تجارتی لین دین بھی نہ کریں ۔ البتہ اگر  دعوت وتبلیغ کی غرض  سے  میل جول رکھے تو اس  میں کوئی گناہ  نہیں ، بلکہ  ایسا شخص اجر  و ثواب  کاحقدار ہوگا ۔ان شاء اللہ تعالی ۔

        لہذا  صورت مسئولہ  میں  آپ  کو  چاہئے  کہ  قادیا  نی شخص  کے  ہاتھ مال  فروخت  نہ  کریں ، اگر شرعی  حکم سے  لاعلمی  کی بنیادپراس سے پہلے کسی قادیانی کو مال  فروخت کیا ہے تو یہ  عمل اسلامی غیرت اور حمیت کے خلا ف ہونے کے باوجود اس  

حوالہ جات

الدر المنثور في التفسير بالمأثور (8/ 86)
لَا تَجِدُ قَوْمًا يُؤْمِنُونَ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ يُوَادُّونَ مَنْ حَادَّ اللَّهَ وَرَسُولَهُ وَلَوْ كَانُوا آبَاءَهُمْ أَوْ أَبْنَاءَهُمْ أَوْ إِخْوَانَهُمْ أَوْ عَشِيرَتَهُمْ أُولَئِكَ كَتَبَ فِي قُلُوبِهِمُ الْإِيمَانَ وَأَيَّدَهُمْ بِرُوحٍ مِنْهُ وَيُدْخِلُهُمْ جَنَّاتٍ تَجْرِي مِنْ تَحْتِهَا الْأَنْهَارُ خَالِدِينَ فِيهَا رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمْ وَرَضُوا عَنْهُ أُولَئِكَ حِزْبُ اللَّهِ أَلَا إِنَّ حِزْبَ اللَّهِ هُمُ الْمُفْلِحُونَ (22)
الدر المنثور في التفسير بالمأثور (8/ 87)
                                 وَأخرج أَبُو نعيم فِي الْحِلْية عَن ابْن مَسْعُود رَضِي الله عَنهُ قَالَ: قَالَ رَسُول الله صلى الله عَلَيْهِ وَسلم: أوحى الله إِلَى نَبِي من الْأَنْبِيَاء أَن قل لفُلَان العابد أما زهدك فِي الدُّنْيَا فتعجلت رَاحَة نَفسك وَأما انقطاعك إليّ فتعززت بِي فَمَاذَا عملت فِي مَالِي عَلَيْك قَالَ يَا رب: وَمَالك عليّ قَالَ: هَل واليت لي وليا أَو عاديت لي عدوا
الدر المنثور في التفسير بالمأثور (8/ 87)
                         وَأخرج الطَّيَالِسِيّ وَابْن أبي شيبَة عَن الْبَراء بن عَازِب قَالَ: قَالَ رَسُول الله صلى الله عَلَيْهِ وَسلم أوثق عرى الإِيمان الْحبّ فِي الله والبغض فِي الله          

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

       دارالافتاء جامعة الرشید     کراچی

۵ربیع  الثانی  ١۴۴۳ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔