021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
فوتگی کے موقع پردعاءکرنا
..جنازے کےمسائلجنازے کے متفرق مسائل

سوال

فوتگی کے موقع پرمیت کے اہل خانہ کے پاس آکردعاء کرناکیساہے؟جس کاطریقہ یہ ہوتاہے کہ ہرآنے والاآکرکہتاہے"ہاتھ اٹھاؤجی"پھرحاضرین مجلس ایک مجلس میں کئی کئی بار ہاتھ اٹھاکردعاءکرتے رہتے ہیں،کیایہ طریقہ درست ہےاورخیرالقرون میں رائج تھا؟ o

o

فوتگی کے موقع پرہاتھ اٹھاکردعاء مانگنااگرچہ فی نفسہ جائزہے،لیکن دعاکےمذکورہ طریقہ کامستحب یاسنت ہونا کسی دلیل کی روسے ثابت نہیں،اس لئےاسے سنت یامستحب سمجھنابدعت کے زمرے میں آتاہے،جس سے اجتناب لازم ہے،اورمستحب یاسنت سے بڑھ کراس کولازم سمجھنا(جیساکہ آج کل بعض جگہوں میں ہوتاہے )تواوربھی قبیح ہے ،البتہ اگراسکوسنت،مستحب یاضروری خیال نہ کیاجائے توا سکی گنجائش ہے۔ فوتگی کے موقع پردعا(تعزیت) مسنون طریقہ سے کرنی چاہئےاورمسنون طریقہ یہ ہے کہ میت کے ورثاء ،رشتے دار دوست احباب وغیرہ میں سے جوقریب رہنے والے ہیں وہ تین دن کے اندر تعزیت کرسکتے ہیں،جواس وقت موجود نہ ہوں ،کہیں دور رہتے ہوں، وہ تین دن کے بعد بھی کرسکتے ہیں ،تعزیت کی حقیقت یہ ہے کہ میت کے ورثہ سے ایسی باتیں کی جائیں ،جن سے ان کاغم ہلکا ہو ،تسکین اورفکرآخرت پیداہو۔ تعزیت کے موقع پر یہ دعامسنون ہے: " إن لله ما أخذو له ما أعطى وكل شيء عنده بأجل مسمى"۔ اوریہ دعاء بھی پڑھ سکتے ہیں:'أعظم اللہ أجرک وأحسن عزاءک وغفرلمیتک"۔ تعزیت کے لئے اتنی دیر بیٹھنا چاہئے ،جس سے میت کے ورثاء کو تکلیف نہ ہو،اہل میت کاتین دن تک بیٹھنا (تاکہ اہل میت سے جوتعزیت کرناچاہے کرسکے )جائزہے ،لیکن اس کولازمی سمجھنااورنہ کرنے والوں کو مطعون کرنا صحیح نہیں۔

حوالہ جات

" صحيح مسلم " 3 / 39: حدثنا أبو كامل الجحدرى حدثنا حماد - يعنى ابن زيد - عن عاصم الأحول عن أبى عثمان النهدى عن أسامة بن زيد قال كنا عند النبى -صلى الله عليه وسلم- فأرسلت إليه إحدى بناته تدعوه وتخبره أن صبيا لها - أو ابنا لها - فى الموت فقال للرسول « ارجع إليها فأخبرها إن لله ما أخذ وله ما أعطى وكل شىء عنده بأجل مسمى فمرها فلتصبر ولتحتسب » فعاد الرسول فقال إنها قد أقسمت لتأتينها. قال فقام النبى -صلى الله عليه وسلم- وقام معه سعد بن عبادة ومعاذ بن جبل وانطلقت معهم فرفع إليه الصبى ونفسه تقعقع كأنها فى شنة ففاضت عيناه فقال له سعد ما هذا يا رسول الله قال « هذه رحمة جعلها الله فى قلوب عباده وإنما يرحم الله من عباده الرحماء۔ "الھندیہ"1/177 : ولابأس لأھل المصیبۃ أن یجلسوافی البیت أوالمسجدثلاثۃ أیام والناس یأتونہم ویعزونہم ویکرہ الجلوس علی باب الدارومایفعل فی بلادالعجم من فرش البسط والقیام علی قوارع الطریق من أقبح القبائح ۔ "حاشية الطحطاوي"1 / 410: تستحب التعزية الخ ويستحب أن يعم بها جميع أقارب الميت إلا أن تكون امرأة شابة وهو المشار إليه بقوله اللاتي لا يفتن وهو بالبناء للفاعل ولا حجر في لفظ التعزية ومن أحسن ما ورد في ذلك ما روي من تعزيته صلى الله عليه وسلم لإحدى بناته وقد مات لها ولد فقال إن لله ما أخذو له ما أعطى وكل شيء عنده بأجل مسمى أو يقول عظم الله أجرك وأحسن عزاءك وغفر لميتك أو نحو ذلك۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ووقتها من حين يموت إلى ثلاثة أيام وأولها أفضل وتكره بعدها لأنها تجدد الحزن وهو خلاف المقصود منها لأن المقصود منها ذكر ما يسلي صاحب الميت ويخفف حزنه ويحضه على الصبر كما نبهنا الشارع على هذا المقصود۔
..

n

مجیب

محمّد بن حضرت استاذ صاحب

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔