021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
لڑکی اوراس کی سوتیلی ماں کونکاح میں جمع کرنا
..نکاح کا بیاننکاح صحیح اور فاسد کا بیان

سوال

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ اقبال نےدو عورتیں مدیحہ اور ماریہ سے شادی کی تھی۔مدیحہ سے اس کی ایک بیٹی تھی جس سے اظہر نے نکاح کیا تھا۔دو سال پہلے اقبال فوت ہوگیا ہے۔اب اظہر اس کی دوسری بیوی ماریہ سے نکاح کرنا چاہتا ہے۔کیا یہ نکاح جائز ہے؟شریعت کی روشنی میں وضاحت فرمائیں۔

o

مذکورہ نکاح درست ہے۔

حوالہ جات

قال العلامۃ الحصکفی رحمہ اللہ تعالی:" حرم الجمع (وطء بملك يمين بين امرأتين أيتهما فرضت ذكرا،لم تحل للأخرى) أبدا … (فجاز الجمع بين امرأة وبنت زوجها)." (الدر المختارمع حاشیۃ ابن عابدین:3/38،39،دار الفکر،بیروت) وفی الفتاوی العالمگیریۃ:" ويجوز بين امرأة وبنت زوجها." (1/277)
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

ابولبابہ شاہ منصور صاحب / فیصل احمد صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔