021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
بیان حلفی کی خلاف ورزی
..قسم منت اور نذر کے احکاممتفرّق مسائل

سوال

ایک رفاہی ادارہ جو بلا سود لوگوں کو قرضے فراہم کرتا ہے اور مسجد میں بیان حلفی لے کر تمام قرض لینے والوں کو حبیب بینک کے چک سائن کروا کردیتے ہیں۔کیا اس طریقے سے مسجد میں میں کوئی بیان حلفی کے خلاف کام کرے تو گناہ نہیں ہو گا۔

o

حلف کی پاسداری مسلمان پر لازم ہے۔اگر کوئی شخص بیان حلفی کے خلاف کام کرے تو گناہ گار ہو گا۔

حوالہ جات

مجمع الأنهر في شرح ملتقى الأبحر (1/ 540) و) ثالثها (منعقدة وهي حلفه على فعل أو ترك في المستقبل وحكمها وجوب الكفارة إن حنث) لقوله تعالى {ولكن يؤاخذكم بما عقدتم الأيمان فكفارته} [المائدة: 89] الآية والمراد به اليمين في المستقبل بدليل قوله تعالى {واحفظوا أيمانكم} [المائدة: 89] ولا يتصور الحفظ على الحنث والهتك إلا في المستقبل
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔