021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
پانچ بیٹوں اور ایک بیٹی میں میراث کی تقسیم
71434میراث کے مسائلمیراث کے متفرق مسائل

سوال

کیا فرماتے ہیں علماء کرام اس مسئلے کے بارے میں کہ حافظ فیض محمد(مرحوم) فوت ہوگئےاور اس وقت انکی میراث تقسیم نہیں ہوئی تھی،جبکہ اس وقت انکے پانچ بیٹے ،ایک بیٹی اور ایک بیوہ زندہ تھے، دو سال بعد اہلیہ کابھی انتقال ہوگیا،ان کے موجو دہ ورثاءمیں پانچ بیٹے اور ایک بیٹی زندہ ہیں،  ان میں شریعت کی رو سے میراث کیسے تقسیم ہوگی؟

نوٹ:اہلیہ کی وفات کے وقت اہلیہ کے والدین پہلے سے فوت ہوچکےتھے۔

o

اگر فیض محمدمرحوم کے وارثین میں اب  صرف پانچ بیٹے اور ایک بیٹی موجود ہیں،اور انکے علاوہ اُس کے دیگر ورثاءماں، باپ ،دادا ،دادی ،نانی  اور بیوی میں سے کوئی بھی زندہ  نہیں ہیں، تومرحوم کے ترکہ سے تجہیز وتکفین کا خرچ نکالا جائے،اس  کے بعداگر اس کے ذمہ قرض ہو،  تو وہ ادا کیاجائے،پھر اگر انہوں نے کوئی جائز وصیت کسی غیر وارث کے لیے کی ہوتو باقی ماندہ ترکہ کے ایک تہائی سے(۳/۱) اُسے پورا کیا جائے، پھر جو ترکہ بچ جائے تو اس کے کل گیارہ حصے بنادیے جائیں ،ان میں سے ایک حصہ بیٹی کو دیاجائے گا اوربقیہ میں سے ہر بیٹے کو ۲،۲ حصے ملیں  گے، فیصد کے اعتبار سے بیٹی کو9.0909 فیصدحصہ ملے گا اورہر بیٹے کو 18.1818 فیصدحصہ ملے گا،تفصیل کے لیے درج ذیل نقشہ ملاحظہ ہو:

ورثاء

عددی حصہ

فیصدی حصہ

بیٹی

1

9.0909%

بیٹا

2

18.1818%

بیٹا

2

18.1818%

بیٹا

2

18.1818%

بیٹا

2

18.1818%

بیٹا

2

18.1818%

کل تعداد:

11

100%


                                                                                                                                                                                                                                                                                                                        

 

حوالہ جات

الفتاوى الهندية (6/ 447)
تركة تتعلق بها حقوق أربعة: جهاز الميت ودفنه والدين والوصية والميراث. فيبدأ أولا بجهازه وكفنه وما يحتاج إليه في دفنه بالمعروف، كذا في المحيط۔
أيسر التفاسير لكلام العلي الكبير (2/ 67)
هذه الآية الكريمة{يُوصِيكُم اللَّهُ فِي أَوْلادِكُمْ  لِلذَّكَرِ مِثْلُ حَظِّ الأُنْثَيَيْنِ} إلخ. والتي بعدهاوهي قوله تعالى: {وَلَكُمْ نِصْفُ مَا تَرَكَ أَزْوَاجُكُمْ} إلخ. نزلت لتفصيل حكم الآية والتي تضمنت شرعية التوارث بين الأقارب المسلمين فالآية الأولى بين تعالى فيها توارث الأبناء مع الآباء، فقال تعالى: { يُوصِيكُمُ اللَّهُ فِي أَوْلادِكُمْ} أي: في شأن أولادكم {لِلذَّكَرِ مِثْلُ حَظِّ الأُنْثَيَيْنِ} يريد إذا مات الرجل وترك أولاداً ذكوراً وإناثاً فإن التركة تقسم على أساس للذكر مثل نصيب الأنثيين، فلو ترك ولداً وبنتاً وثلاثة دنانير فإن الولد يأخذ دينارين، والبنت تأخذ ديناراً۔
أيسر التفاسير للجزائري (1/ 440)
لقد كان أهل الجاهلية لا يورثون النساء ولا الأطفال بحجة أن الطفل كالمرأة لا تركب فرساً ولا تحمل كلاً ولا تنكي عدواً، يكسب ولا تكسب، وحدث أن امرأة يقال لها: أم كحة، مات زوجها وترك لها بنتين فمنعهما أخو الهالك من الإرث فشكت: أم كحة إلى رسول الله صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، فنزلت هذه الآية الكريمة: {لِلرِّجَالِ نَصِيبٌ مِمَّا تَرَكَ الْوَالِدَانِ وَالأَقْرَبُونَ وَلِلنِّسَاءِ نَصِيبٌ مِمَّا تَرَكَ الْوَالِدَانِ وَالأَقْرَبُونَ} ، ومن ثم أصبحت المرأة؛ كالطفل الصغير يرثان كالرجال، وقوله تعالى: {مِمَّا قَلَّ مِنْهُ} أي: من المال المتروك {أَوْ كَثُرَ} حال كون ذلك نصيباً مفروضاً لابد من إعطائه الوارث ذكراً كان أو أنثى صغيراً أو كبيراً۔   

     وقاراحمد

  دارالافتاء جامعۃ الرشیدکراچی

  20جمادی الثانی ۱۴۴۲ ھ  

n

مجیب

وقاراحمد بن اجبر خان

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔