021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
میت کے منہ سے سونےکے دانت نکالنے کا حکم
71041جائز و ناجائزامور کا بیانجائز و ناجائز کے متفرق مسائل

سوال

کیافرماتے ہیں علماء کرام درج ذیل مسئلہ کے بارےمیں کہ

         اگرکوئی ایسا شخص فوت ہوجائے جس کے منہ میں سونے کا مصنوعی دانت لگا ہوتوکیا ان دانتوں کومنہ سے نکالنا ضروی ہوگایانہیں؟

o

صورتِ مسئولہ میں اگر مذکورہ مصنوعی دانت آسانی سے نکالنا ممکن ہوتو اس کو نکالناضروری ہےکیونکہ یہ بلاوجہ مال کا ضیاع ہے لیکن اگر دانت منہ سے نکالنا مشکل ہو اور زیادہ محنت کرنے میں میت کی بے حرمتی ہو، تو اندر ہی چھوڑ دیا جائے، اس سے میت کےغسل میں کوئی فرق نہیں پٕڑے گا،اورجہاں تک مال کی حرمت کا تعلق ہے تو میت کی حرمت مال کی حرمت سے زیادہ ہے۔

حوالہ جات

و في ’’ الشامیۃ ‘‘ :
 وإن کان حرمۃ الآدمي أعلی من صیانۃ المال لکنہ أزال احترامہ بتعدّیہ کما في الفتح ۔ ومفادہ أنہ لو سقط في جوفہ بلا تعدّ لا یشقّ اتفاقًا ۔ واللہ اعلم ۔ (۲/۲۳۸ ، ط: مکتبہ سعید کراچی و دار الفکر بیروت)ماراجع ایضا’’ احسن الفتاوی ‘‘(۴/۲۵۱،ط: بنگلہ اسلامک اکیڈمی دہلی، وفتاویٰ دار العلوم زکریا:۲/۶۱۴، ۶۱۵)
قال اللہ تعالی فی’’ القرآن الکریم ‘‘ : { ولقد کرّمنا بنيٓ اٰدم وحملنٰہم في البرّ والبحر} ۔ (سورۃ الإسراء :۷۰)
و في ’’ المؤطا للإمام مالک ‘‘ :
 قال مالک : إنہ بلغہ أن عائشۃ زوج النبي ﷺ کانت تقول : ’’ کسر عظم المسلم میتاً ککسرہ وہو حي ‘‘ ۔ قال مالک : نعني في الإثم ۔ (ص/۸۳ ، کتاب الجنائز ، باب ما جاء في الاختفاء النبش)
 في ’’ أوجز المسالک إلی مؤطا مالک ‘‘ :
 قال الباجي : ترید أن لہ من الحرمۃ في حال موتہ مثل مالہ منہا حال حیاتہ ، وإن کسر عظامہ في حال موتہ یحرم کما یحرم کسرہا حال حیاتہ ، وقد أخرج أحمد وأبوداود وابن ماجۃ عن عائشۃ ، أن النبي ﷺ قال : ’’ کسر عظم المیت ککسرہ عظم الحي ‘‘ ۔۔۔۔۔۔۔ ثم قال الباجي : یرید مالک أنہما لا یتساویان في القصاص وغیرہ ، وإنما یتساویان في الإثم ۔ (۴/ ۵۸۷، ۵۸۸،کتاب الجنائز)
وفي ’’ رد المحتار ‘‘ :
والآدمي مکرم شرعاً وإن کان کافراً، فإیراد العفو علیہ وابتذالہ بہ وإلحاقہ بالجمادات إذلال لہ ۔۔۔۔۔ إلا أن یجاب بأن المراد تکریم صورتہ وخلقتہ ، ولذا لم یجز کسر عظام میت کافر ۔ (۷/۲۴۵ ، کتاب البیوع ، مطلب الآدمي مکرم شرعًا ولو کافرًا ، الفتاوی الہندیۃ: ۵/۳۵۴ ، کتاب الکراہیۃ ، الباب الثامن عشر في التداوي) (وراجع ایضااحسن الفتاویٰ: ۴/۲۵۱، فتاویٰ دار العلوم زکریا:۲/۶۱۴، ۶۱۵)

  سیدحکیم شاہ عفی عنہ

دارالافتاء جامعۃ الرشید

       15/6/1442ھ               

n

مجیب

سید حکیم شاہ صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔