021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
شلوارپنڈلی سےنیچےہواورنمازپڑھی جائےتوکیاحکم ہے؟
74898نماز کا بیاننماز کےمفسدات و مکروھات کا بیان

سوال

سوال:مسئلہ الحدیث:پنڈلی سےشلواراوپرکیےبغیرنمازفاسدہوتی ہے،اگرکسی کی شلوارپنڈلی سےنیچےہواورنمازاداء کرتاہو،تووہ بلاشک وشبہہ دوزخ میں جائےگا،اورکوئی نمازقبول نہیں ہوگی۔بعض الناس۔

 

o

یہ مسئلہ"شلوارپنڈلی سےنیچےہوتونمازفاسدہوتی ہے"درست نہیں،پنڈلی سےتونیچےشلواررکھی جاسکتی ہے،اس میں کوئی حرج نہیں،اس حالت میں نمازبھی پڑھی جاتی ہے۔

ہاں ٹخنوں سےنیچےشلواررکھنامردوں کےلیےمکروہ ہے،احادیث میں اس پروعیدیں آئی ہیں اوراگرکوئی اسی حالت میں نماز پڑھتاہےتونمازتوہوجائےگی،البتہ مکروہ تحریمی ہونےکی وجہ سےثواب سےمحروم رہےگا۔

حوالہ جات

"صحیح البخاری 2/861:
عن ابی ھریرۃ رضی اللہ عنہ عن النبی صلی اللہ علیہ وسلم قال: مااسفل من الکعبین من الازارفی النار۔
"صحيح البخاري " 7 / 141:
عن أبي هريرة أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال لا ينظر الله يوم القيامة إلى من جر إزاره بطرا۔
"سنن أبي داود"2 /  455:
عن أبي هريرة قال  بينما رجل يصلي مسبلا إزاره فقال له رسول الله صلى الله عليه و سلم " اذهب فتوضأ " فذهب فتوضأ ثم جاء فقال " اذهب فتوضأ " فقال له رجل يارسول الله مالك أمرته أن يتوضأ ثم سكت عنه قال " إنه كان يصلي وهو مسبل إزاره وإن الله تعالى لايقبل صلاة رجل مسبل "
"حاشية الطحطاوي على مراقي الفلاح "1 / 233:
قال الطحطاوی  فی المکروھات :وكذا ما هو من عادة أهل التكبر وصنيع أهل الكتاب۔

محمدبن عبدالرحیم

دارالافتاءجامعۃالرشیدکراچی

29/ربیع الثانی  1443 ھج

n

مجیب

محمّد بن حضرت استاذ صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔