021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
کیا باہر اقامت کرنے والا اپنے گھر میں قصر کرے گا؟
75108نماز کا بیانمسافر کی نماز کابیان

سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ   ایک شخص کا گھر لاہور میں ہے، لیکن وہ پڑھائی کے سلسلے میں     اسلام آباد گیا ہوا  ہے۔    اب اگر وہ شخص دو دن کے لیے واپس اپنے گھر لاہور  آئے گا تو وہ قصر نماز پڑھے گا یا پوری نماز ادا کرنا لازمی ہوگی؟                                        

o

لاہور اس شخص  کا وطن اصلی ہے، اس لیے اپنے گھر میں پوری نماز پڑ ھے گا۔

حوالہ جات

قال العلامۃ الحصکفی  رحمہ اللہ تعالی :      
الوطن الأصلي  هو موطن ولادته أو تأهله أو توطنه يبطل بمثله  إذا لم يبق له بالأول أهل، فلو بقي لم يبطل بل يتم فيهما.
قال العلامۃ ابن عابدین   رحمہ اللہ تعالی :   
(قوله بل يتم فيهما) أي بمجرد الدخول وإن لم ينو إقامة. 
( الدر المختار مع رد المحتار: 2/132)
قال العلامۃ ابن نجیم    رحمہ اللہ تعالی :      
  (قوله ‌ويبطل ‌الوطن ‌الأصلي بمثله لا السفر ووطن الإقامة بمثله والسفر والأصلي) ؛ لأن الشيء يبطل بما هو مثله لا بما هو دونه فلا يصلح مبطلا له. (البحر الرائق: 2/147)

عبدالعظیم

دارالافتاء، جامعۃالرشید ،کراچی

17/جمادی الاولی   1443 ھ               

n

مجیب

عبدالعظیم بن راحب خشک

مفتیان

فیصل احمد صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔