021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
ملازمت سے فارغ کرتے وقت اضافی تنخواہ کاحکم
63929اجارہ یعنی کرایہ داری اور ملازمت کے احکام و مسائلدلال اور ایجنٹ کے احکام

سوال

میں  حیدر آباد  میں   ایک   مدرسہ میں  دفتر  استقبالیہ میں   کام  کرتارہا    ،اس مدرسہ  کا قانون  یہ   ہے کہ  مستقل ملازم      کو اگر   فورا  ملازمت  سے فارغ   کیاجائے   ، تو اس کو ایک ماہ  کی ایڈوانس  تنخواہ   دی جاتی ہے ،   مجھے   ملازمت  سے اچانک   فارغ  کردیا  ، کوئی  وجہ نہیں  بتائی ، لیکن  ایک  ماہ  کی اضافی   تنخواہ     نہیں  دی ۔

قانون    کے مطابق   مجھے  ایک ماہ   کی اضافی  تنخواہ   ملنی چاہئے    ، ادارہ    اضافی  تنخواہ   دے نہیں رہا ہے  ، میرے پاس    ادارہ  کی کچھ  رقم ہے ، کیا  میں   اس   رقم سے ایک ماہ  کی  تنخواہ    وصول  کرسکتا ہوں کہ   وہ کاٹ کر بقیہ   واپس  کردوں ؟

o

اگر  تقرری  فارم میں    معاہدہ   کی یہ شق  موجود  ہے ،کہ کسی ضرورت  سے اچانک   فاغ  کرنے  کی  صورت  میں     ایک ماہ   کی اضا فی  تنخواہ   دیجائے گی ، اور  آپ  نے مدرسہ   کے کسی  قانون  کی خلاف  ورزی بھی  نہیں  کی بلکہ   بلاوجہ  آپ  کو فارغ  کیاگیا  ہے ،تو    ایسی صورت میں آپ   ایک ماہ کی اضافی   تنخواہ  کے حقدار  ہونگے ، جو آپ  مذکورہ   رقم  سے وصول کرسکتے ہیں ،اگر  آپ  سے ایسا کوئی   معاہدہ  نہیں  ہوا ہے  یا  آپ     نے  کوئی  ایسا کام  کیا    ہے جس  کی بنا پر  آپ  کو  ملازمت   سے  فارغ  کرناضروری  تھا  تو ایسی  صورت  میں  آپ اضافی  تنخواہ کے  حقدار  نہیں  لہذا ایسی  صورت میں آپ کے   لئے  اس رقم سے  اضافی  تنخواہ وصول  کرنا بھی جائز  نہیں ۔

حوالہ جات

۰۰۰۰

احسان اللہ شائق   عفااللہ عنہ

دارالافتاء  جامعة  الرشید کراچی

۲١ذی الحجہ ١۴۳۹ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔