021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
وراثت میں بیوہ کےحق سکونت کاحکم
74305میراث کے مسائلمناسخہ کے احکام

سوال

ایک شخص کا انتقال ہوا، ورثا  میں  ایک  بیوہ ۔دو بیٹے ۔ تین بیٹیاں  شامل ہیں ،کل  ترکہ کی مالیت چار کڑور ہے، وراثت  تقسیم  ہونے کے بعد  بیوہ  اپنی رہائش کہاں  کریگی ؟ بیٹے  بیٹیوں کے ساتھ  یا الگ؟

o

  مرحوم نے انتقال کے وقت منقولہ  غیر منقولہ  جائداد،   سونا ،چاندی   نقدی  اور چھوٹا  بڑا  جو بھی سامان اپنی ملک میں  چھوڑا  ہے  سب مرحوم کا ترکہ ہے،  اس میں سے  اولا  کفن دفن کا متوسط خرچہ  نکالا جائے ، اس کے بعد  اگر مرحوم کے ذمے کسی کا قرض ہو تو اس  کو ادا کیاجائے ، اس کے بعد  اگر مرحوم نے کوئی  جائز وصیت کی ہو   تو تہائی مال کی حد تک اس  پر عمل کیاجائے ۔اس کے بعد مال کو مساوی  8 حصوں میں تقسیم کرکے  بیوہ  کو ایک  حصہ ،دونوں بیٹوں  میں سے ہر ایک  کو دودو  حصے ، اور تینوں بیٹیوں میں سے  ہر ایک  کو ایک ایک  حصہ  دیاجائے ۔

اگر قابل تقسیم ترکہ    چار کڑور  ہی ہے،  تو  ترکہ  کی  تقسیم اس   طرح ہوگی  کہ بیوہ کو  پچاس   لاکھ دیاجائے ۔اور  تینوں لڑکیوں میں سے ہر ایک  کو پچاس   لاکھ  پچاس  لاکھ دیاجائے۔اور  دونوں لڑکوں  میں سے ہر ایک  کوایک   ایک کڑور  دیاجائے  ۔

نوٹ؛ ترکہ  میں ہر ایک کاحصہ   مقرر  ہوجانے کے بعد  اگر  ماں  اپنی  اولاد کے ساتھ  رہائش  رکھنا چاہے  اور کھانا  پینا ساتھ رکھنا  چاہے   تو شرعا  اس کی  بھی اجازت  ہے ۔  کھانے  پینے  کا  خرچہ  سب سے برابر وصول  کیاجائے ، اس کے علاوہ  خرچے  میں جس کا  جتنا  خرچہ  ہو  اس کا  حساب رکھا جائے ۔

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (4/ 307)
مطلب فيما يقع كثيرا في الفلاحين مما صورته شركة مفاوضة [تنبيه] يقع كثيرا في الفلاحين ونحوهم أن أحدهم يموت فتقوم أولاده على تركته بلا قسمة ويعملون فيها من حرث وزراعة وبيع وشراء واستدانة ونحو ذلك، وتارة يكون كبيرهم هو الذي يتولى مهماتهم ويعملون عنده بأمره وكل ذلك على وجه الإطلاق والتفويض، لكن بلا تصريح بلفظ المفاوضة ولا بيان جميع مقتضياتها مع كون التركة أغلبها أو كلها عروض لا تصح فيها شركة العقد، ولا شك أن هذه ليست شركة مفاوضة، خلافا لما أفتى به في زماننا من لا خبرة له بل هي شركة ملك كما حررته في تنقيح الحامدية.
ثم رأيت التصريح به بعينه في فتاوى الحانوتي، فإذا كان سعيهم واحدا ولم يتميز ما حصله كل واحد منهم بعمله يكون ما جمعوه مشتركا بينهم بالسوية وإن اختلفوا في العمل والرأي كثرة وصوابا كما أفتى به في الخيرية، وما اشتراه أحدهم لنفسه يكون له ويضمن حصة شركائه من ثمنه إذا دفعه من المال المشترك، وكل ما استدانه أحدهم يطالب به وحده.
وقد سئل في الخيرية من كتاب الدعوى عن إخوة أشقاء عائلتهم وكسبهم واحد وكل مفوض لأخيه جميع التصرفات ادعى أحدهم أنه اشترى بستانا لنفسه. فأجاب: إذا قامت البينة على أنه من شركة المفاوضة تقبل وإن كتب في صك التبايع أنه اشترى لنفسه. 

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

       دارالافتاء جامعة الرشید    کراچی

۲۸ صفر ١۴۴۳ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔