021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
کسٹم کلیئر کروانے کی اجرت کاحکم
78001جائز و ناجائزامور کا بیانبچوں وغیرہ کے نام رکھنے سے متعلق مسائل

سوال

پاکستانی  تاجر افغانستان سے  فروٹ  ،سبزی  وغیر ہ   منگواتے ہیں ، اس کا  طریقہ  یہ  ہوتا  ہے کہ   باڈر  پر  کلیئرنگ ایجنٹ  ہوتاہے ، اس  کوکسٹم   کلیئر  کروانے  کااختیار  ہوتا  ہے ، تاجر  اسی  سے  معاملہ  طئے  کرتا  ہے ،بروقت  یا  ٹرک         پہنچنے   سے پہلے سے کہ   وہ ایجنٹ  مال کی  کلیئر نگ  بھی  کروائےاور پاکستانی  تاجر کی طرف   سے ٹرک   والوں  کو کرایہ  بھی ادا  کرے ، اور  فروٹ   ،سبزی  وغیرہ  کی قیمت بھی  ادا کرے ﴿جو بعد  میں پاکستانی  تاجر  سے  اصول  کرلیتا ہے ﴾ ایجنت  کا  یہ فائدہ  ہوتا  کہ  پاکستانی  تاجر  ان سب امور کی  انجام  دہی  کے  عوض  میں   ایجنٹ  کو   15 ،20  ہزار دیدیتا  ہے ۔

اب سوال یہ   ہے کہ    ایجنٹ  کلیئرنگ  کے ساتھ   ایک بڑی  رقم   پاکستانی  تاجر کو بطور  قرض دیتا  ہے ،مقصود  اپنے  مال  کسٹم  کی فیس ادا کرے اور اجرت حاصل  کرے۔اگر   یہ صورت  ناجائز  ہے  تو  اس کی کوئی جائز صورت بتادیں۔

o

مسئولہ  صورت  میں  ایجنٹ  جو کام  انجام دیتا  ہے ،ٹرک  والوں سے  مال  وصول  کرنا  ،مال  کو بحفاظت  پاکستانی  تاجروں کے حوالے کرنا ،کسٹم کلیئر  کروانا ان سب خدمات پر  عرف  کے مطابق  متعین  اجرت وصول  کرنا جائز ہے۔بشرطیکہ اس معاملے   میں  یہ بات  بطور شرط  شامل نہ  ہوکہ ایجنٹ  دیگر  امور کی انجام  دہی  کے ساتھ مال کی قیمت بھی  لازمااپنی طرف  سے ادا کرےگا ۔کیونکہ ایجنٹ  کے ذمہ مال  کی  قیمت کی ادائیگی  لازم  ہونے کی صورت میں اجارہ کو  قرض کےساتھ مشرط  کرنا  لازم  آتا  ہے جوکہ  جائز نہیں ہے ۔اور اگر ان خدمات  کی  اجرت کے علاوہ  ایجنٹ کی ادا کردہ  رقم پرتاجر   اضافی  رقم بھی ادا کرے ،تو  یہ  قرض سے فائدہ  حاصل کرنا ہوا جو سودی  معاملہ  ہونے  کی وجہ سے  ناجائز  اورحرام  ہے۔

اس لئے اس معاملے کی بے غبار طورپر جائز صورت  یہ ہوسکتی  ہے  کہ ایجنٹ  صرف سوال میں ذکر کردہ  امور انجام  دے  اوراس کی متعین اجرت وصول کرے ۔مال کی قیمت  کی ادائیگی  کو اپنے  ذمہ  نہ  لے ، یعنی  ایجنٹ اپنی  رقم  درمیان  میں  داخل ہی نہ  کرے ،بلکہ  رقم  کی ادائیگی  تاجر، ٹرک    ڈرائیوروں کو براہ  راست  کریں  ،یا ایجنٹ  کو   پہلے سے  رقم  دیکر  وکیل  کے طور پر مال  چھڑوانے کی   ذمے داری دےتو یہ معاملہ  شرعا  جائز  ہوگا ۔

حوالہ جات

سنن أبي داود للسجستاني (3/ 303)
عبد الله بن عمرو قال قال رسول الله -صلى الله عليه وسلم- « لا يحل سلف وبيع ولا شرطان فى بيع ولا ربح ما لم تضمن ولا بيع ما ليس عندك ».
عون المعبود لمحمد آبادي (9/ 292)
( لا يحل سلف وبيع ) قال الخطابي وذلك مثل أن يقول أبيعك هذا العبد بخمسين دينارا على أن تسلفني ألف درهم في متاع أبيعه منك إلى أجل أو يقول أبيعكه بكذا على أن تقرضني ألف درهم ويكون معنى السلف القرض وذلك فاسد لأنه يقرضه على أن يحابيه ( المحاباة المسامحة والمساهلة ليحابيه أي ليسامحه في الثمن ) في الثمن فيدخل الثمن في حد الجهالة ولأن كل قرض جر منفعة فهو ربا انتهى
 ( ولا شرطان في بيع ) قال البغوي هو أن يقول بعتك هذا العبد بألف نقدا أو بألفين نسيئة فهذا بيع واحد تضمن شرطين يختلف المقصود فيه باختلافهما ولا فرق بين شرطين وشروط وهذا التفسير مروي عن زيد بن علي وأبي حنيفة ۔وقيل معناه أن يقول بعتك ثوبي بكذا وعلى قصارته وخياطته فهذا فاسد عند أكثر العلماء
 وقال أحمد إنه صحيح  وقد أخذ بظاهر الحديث بعض أهل العلم فقال إن شرط في البيع شرطا واحدا صح وإن شرط شرطين أو أكثر لم يصح فيصح مثلا أن يقول بعتك ثوبي على أن أخيطه ولا يصح أن يقول على أن أقصره وأخيطه  ومذهب الأكثر عدم الفرق بين الشرط والشرطين واتفقوا على عدم صحة ما فيه شرطان كذا في النيل
الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (6/ 63)
ال في التتارخانية: وفي الدلال والسمسار يجب أجر المثل، وما تواضعوا عليه أن في كل عشرة دنانير كذا فذاك حرام عليهم. وفي الحاوي: سئل محمد بن سلمة عن أجرة السمسار، فقال: أرجو أنه لا بأس به وإن كان في الأصل فاسدا لكثرة التعامل وكثير من هذا غير جائز، فجوزوه لحاجة الناس إليه كدخول الحمام وعنه قال: رأيت ابن شجاع يقاطع نساجا ينسج له ثيابا في كل سنة۔

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

دارالافتاء جامعة الرشید     کراچی

۷ربیع  الاول  ١۴۴۴ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے