021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
مسبوق نے امام کے پیچھے سلام پھیردیا
..نماز کا بیانسجدہ سہو کابیان

سوال

مسبوق نے امام کے پیچھے بھولے سے سلام پھیر دیاتوکیاحکم ہے

o

اگرمسبوق نے قصداسلام پھیراتونماز فاسد ہوگئی ،اوراگربھولے سےسلام پھیراتوحکم یہ ہے کہ اگریہ سلام امام کےساتھ پھیرا تب تومسبوق پرکچھ نہیں ہے ،کیونکہ اس صورت میں یہ مقتدی ہے اورمقتدی پر اما م کے پیچھے بھول جانے سے سجدہ سہو واجب نہیں ہوتا، اوراگرامام کے بعد سلام پھیراتومسبوق کے ذمہ سجدہ سہو لازم آئے گا،کیونکہ اس صورت میں یہ منفرد ہے،اورمنفرداگر بھول جائے تواس پر سجدہ سہو واجب ہوتاہے ۔

حوالہ جات

"ردالمحتارعلی الدرالمختار"4 / 358: ( قوله ولو سلم ساهيا ) قيد به لأنه لو سلم مع الإمام على ظن أنه عليه السلام معه فهو سلام عمد فتفسد كما في البحر عن الظهيرية ( قوله لزمه السهو ) لأنه منفرد في هذه الحالة ح . ( قوله وإلا لا ) أي وإن سلم معه أو قبله لا يلزمه لأنه مقتد في هاتين الحالتين . وفي شرح المنية عن المحيط إن سلم في الأولى مقارنا لسلامه فلا سهو عليه لأنه مقتد به ، وبعده يلزم لأنه منفرد ا ه۔ " فتح القدير " 2 / 264: ولو سلم المسبوق مع الإمام ساهيا لا سهو عليه ، وإن سلم بعده فعليه لتحقق سهوه بعد انفراده ، ولو سلم على ظن أن عليه أن يسلم معه فهو سلام عمد يمنع البناء
..

n

مجیب

محمّد بن حضرت استاذ صاحب

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔