021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
مہر معجل کی صورت میں عورت کو زکوٰۃ دینا
..زکوة کابیانمستحقین زکوة کا بیان

سوال

کیا فرماتے ہیں علماء کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ ایک عورت کی شادی ہوئی اور اس کا مہر معجل اس کے خاوند کے ذمہ ہے اور اس کے علاوہ اس کے پاس کچھ نہیں،تو کیا اُس عورت کو زکوٰۃ دی جاسکتی ہے؟

o

اگر اس کا خاوند مالدار ہے اور مہر کی مقدار نصاب کے برابر یا زیادہ ہےتو اس صورت میں عورت کو زکوٰۃ دینے سے زکوٰۃ ادا نہیں ہوگی اور اگر شوہر غریب ہے یا مہر کی مقدار نصاب سے کم ہے تو عورت فقیرہ شمار ہوگی اور اس کو زکوٰۃ دینا درست ہے ۔

حوالہ جات

قال العلامۃ ابن عابدین رحمہ اللہ تعالی:" والمرأة موسرة بالمعجل لو الزوج مليا وبالمؤجل لا، وبدار تسكنها مع الزوج إن قدر على الإسكان". (رد المحتار:9/520،دار المعرفۃ)
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

فیصل احمد صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔