021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
کیا مونچھیں رکھنے والے مرد کی آپﷺ سفارش کریں گے؟
57090جائز و ناجائزامور کا بیانناخن ،مونچھیں اور ،سر کے بال کاٹنے وغیرہ کا بیان

سوال

مفتی صاحب !میں نے ایک بیان میں سنا ہے کہ مونچھیں رکھنے والے مرد کی آپٍﷺ سفارش نہیں کریں گے،اور انہیں حوض کوثر سے پانی پینا بھی نصیب نہیں ہوگا تو کیا یہ دونوں باتیں صحیح ہیں؟رہنمائی فرمائیں۔

o

یہ بات درست نہیں، علامہ نورالدین علی بن محمد رحمہ اللہ اور علامہ جوزقانی رحمہ اللہ نےاس روایت کوموضوعات میں سے شمار کیاہے۔البتہ یہ صحیح حدیث ہے کہ آپﷺ نے فرمایا: مشرکین کی مخالفت کرو،داڑھیوں کو بڑھاؤ اور مونچھوں کوصاف کرو۔

حوالہ جات

قال العلامۃ نور الدين علي بن محمد بن علي بن عبد الرحمن ابن عراق الكناني رحمہ اللہ (المتوفى: 963ھ): من طول شاربه في دار الدنيا طول اللہ قادمته يوم القيامة وسلط عليه بكل شعرة على شاربه شيطانا، فإن مات على ذلك الحال لا يستجاب له دعوة ولا تنزل عليه رحمة ،ولا ينظر اللہ إليه يوم القيامة ومن أطال شاربه تسميه الملائكة نجسا ،وإن مات مات عاصيا وقام من قبره مكتوبا بين عينيه آيس من رحمة اللہ ولا يطول شاربه إلا ملعون على لسان الملائكة والنبيين ويمشي على الأرض والأرض تلعنه من تحته ،ومن طول شاربه فلا يصيب شفاعتي ولا يشرب من حوضي وضيق اللہ عليه قبره وينزل عليه ملك الموت وهو غضبان، ومن قص شاربه فله عند اللہ بكل شعرة من الثواب ألف مدينة من در وياقوت.(تنزيه الشريعة المرفوعة عن الأخبار الشنيعة الموضوعة :2/ 267) وقال العلامۃ جوزقانی رحمہ اللہ:ھذا حدیث باطل موضوع،فی اسنادہ من المجھولین غیر واحد،وحماد بن زید لم یسمع من أنس بن مالک رضی اللہ عنہ شیأ ولم یرہ. (الاباطیل والمناکیر والصحاح والمشاھیر:2/308) عن ابن عمر عن النبي صلى الله عليه وسلم قال :خالفوا المشركين وفروا اللحى وأحفوا الشوارب. (صحيح البخاري :7/ 160) واللہ سبحانہ و تعالی أعلم
..

n

مجیب

فضل حق صاحب

مفتیان

فیصل احمد صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔