021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
تعمیر مسجد کی نذر صحیح نہیں ہے
..قسم منت اور نذر کے احکاممتفرّق مسائل

سوال

کیا فرماتے ہیں علماء کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ ایک شخص نے یہ نذر مانی کہ اگر میرا فلاں کام ہوگیا تو میں مسجد کی تعمیر میں حصہ لوں گا،اب اس شخص کا کام ہوتوگیا ہے،لیکن مذکورہ مسجد میں تعمیر کا کام ختم ہوچکاہے۔کیا یہ نذر ختم ہوگئی ہے یا باقی ہے؟اگر باقی ہے تو اس کو پوری کرنے کی کیا صورت ہوگی؟

o

نذر کے انعقاد کے لیے شرط یہ ہے کہ جس چیز کی نذر مانی جارہی ہو وہ عبادت مقصودہ ہو اور اس کی جنس سے کوئی فرد فرض یا واجب ہو،تعمیر مسجد اگر چہ واجب ہے مگر عبادت مقصودہ نہیں،لہذا مذکورہ نذر واجب الادا نہیں ہے۔

حوالہ جات

قال العلامۃ الحصکفی رحمہ اللہ تعالی:" (ومن نذر نذرا مطلقا، أو معلقا بشرط ،وكان من جنسه واجب) أي فرض كما سيصرح به تبعا للبحر والدرر (وهو عبادة مقصودة) خرج الوضوء، وتكفين الميت (ووجد الشرط) المعلق به (لزم الناذر)؛ لحديث :"من نذر وسمى فعليه الوفاء بما سمى." وقال العلامۃ ابن عابدین رحمہ اللہ تعالی:" وفي البدائع: ومن شروطه :أن يكون قربة مقصودة ،فلا يصح النذر بعيادة المريض، وتشييع الجنازة، والوضوء، والاغتسال، ودخول المسجد، ومس المصحف، والأذان، وبناء الرباطات والمساجد وغير ذلك، وإن كانت قربا إلا أنها غير مقصودة اهـ . (الدر المختار مع رد المحتار:3/735،دار الفکر،بیروت)
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

ابولبابہ شاہ منصور صاحب / فیصل احمد صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔