021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
فرض نماز کی آخری دو رکعتوں میں سورت ملانےکاحکم
..نماز کا بیاننماز کے فرائض و واجبات کا بیان

سوال

ایک شخص نےعصر کی فرض نمازکی آخری دو رکعتوں میں سوره فاتحہ کےساتھ سورتیں بھی ملالیں اور آخرمیں سجدہ سہو کرنابھی بھول گیا،تو کیا اس شخص کی نماز درست ہوگئی یا اسے دوبارہ پڑھنی پڑےگی؟

o

اس صورت میں اس شخص پرسجدہ سہوواجب نہیں ہوتا،لہذا اس کی نماز ادا ہوگئی، دوبارہ پڑھنے کی ضرورت نہیں۔

حوالہ جات

قال العلامة المرغینانی رحمہ اللہ: والقراءة فی الفرض واجبة فی الرکعتین، وھو مخیر فی الأ خریین. (الهداية: 2/39) وقال أيضا: ولهذا لایجب السھو بترکھا فی ظاھرالروایة.(2 /40) وفی الفتاوی الھندیة: ولو قرأ في الأخريين الفاتحة والسورة، لا يلزمه السهو؛ وهو الأصح . ( الهندية 1/ 126) وقال العلامة ابن عابدين رحمه الله: قوله: وهل يکره أي ضم السورة. قوله: المختار لا أي لايكره تحريما بل تننزيها؛ لأنه خلاف السنة. قال فی المنية وشرحها: فإن ضم السورة إلي الفاتحة ساهيا يجب عليه سجدتا السهو فی قول أبی يوسف؛ لتأخر الرکوع عن محله، وفي ظاهرالروايات لا يجب؛ لأن القراءة فيهما مشروعة من غير تقدير، والاقتصار علی الفاتحة مسنون؛ لا واجب.(رد المحتار:2/133) ھکذا فی امدادالفتاوی(1/185) وخیرالفتاوی (2/630)
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

فیصل احمد صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔