021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
ادھار پر مہنگا خریدنا
..خرید و فروخت کے احکامخرید و فروخت کے جدید اور متفرق مسائل

سوال

پوچھنا یہ ہے کہ میں کپڑے کا کاروبار کرتا ہوں،اگر میں کپڑا نقد خریدوں تو مثلاً 1000 روپے کا ملتا ہے اور اگر ادھار پر خریدوں تو اسی کپڑے کی قیمت 1300 روپے ہوتی ہے۔کیا یہ سود ہو گا؟ایسا کرنا درست ہے؟تفصیل سے واضح فرما دیں۔

o

ایسا کرنا درست ہے یہ سود نہیں ہے۔

حوالہ جات

مجلة الأحكام العدلية (ص: 50) (المادة 245) البيع مع تأجيل الثمن وتقسيطه صحيح الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (5/ 142) (قوله: لزم كل الثمن حالا) لأن الأجل في نفسه ليس بمال، فلا يقابله شيء حقيقة إذا لم يشترط زيادة الثمن بمقابلته قصدا، ويزاد في الثمن لأجله إذا ذكر الأجل بمقابلة زيادة الثمن قصدا۔
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔