021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
دفتری اوقات میں تلاوت کا حکم
..اجارہ یعنی کرایہ داری اور ملازمت کے احکام و مسائلملازمت کے احکام

سوال

مفتی صاحب! میں جس آفس میں کام کرتا ہوں، اس میں ورکنگ ٹائم صبح 9 بجے سے شام 5 بجے تک ہے۔ کام مسلسل نہیں ہوتا، ورکنگ ٹائم میں کام کسی بھی وقت آسکتاہے۔ اس لیے اس سارے وقت میں حاضر رہنا ضروری ہوتاہے۔ سوال یہ ہے کہ اگر آفس میں کام نہ ہوتو کیا ہم قرآن پاک کی تلاوت کرسکتے ہیں یا کوئی وظیفہ پڑھ سکتے ہیں؟

o

جی، اگر تلاوت یا ظیفہ وغیرہ سے کام میں کوئی حرج نہ ہوتا ہو تو فارغ وقت میں پڑھ سکتے ہیں۔

حوالہ جات

الهداية في شرح بداية المبتدي (3 / 243): قال: "والأجير الخاص الذي يستحق الأجرة بتسليم نفسه في المدة وإن لم يعمل كمن استؤجر شهرا للخدمة أو لرعي الغنم"
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔