021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
موقوفہ زمین کو بیچنے کا حکم
..وقف کے مسائلمدارس کے احکام

سوال

زید نے ایک زمین وقف کی نیت سے خریدی اور اس کو وقف کردیا اور ایک قاری صاحب کو حوالہ کردی کہ اس میں مدرسہ کھولیں۔ قاری صاحب نے دیکھا کہ زمین غیر آباد جگہ میں ہے ، انہوں نے وہ زمین بیچ کر آبادی میں ایک چھوٹا سا مکان خرید لیااور اس میں مدرسہ کھول لیا۔ کیا قاری صاحب کا ایسا کرنا صحیح ہے؟

o

اصل مذہب یہ ہے کہ وقف کو بیچنا جائز نہیں ہے۔ البتہ بعض حضرات نے ضرورت کے وقت اس کی اجازت دی ہے۔ لہذا بلاضرورت شدیدہ اصل مذہب کو چھوڑنا جائز نہیں،لیکن اگر ضرورت شدیدہ ہو تو پھر اس کی گنجائش ہے۔ چونکہ علاقہ کا غیر آباد ہونا بھی ضرورت شدیدہ میں داخل ہے، اس لیے وقف زمین بیچ کر،آباد علاقے میں زمین خریدکر مدرسہ کھولنا جائز ہے۔

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (4 / 357): لهم تحويل المسجد إلى مكان آخر إن تركوه بحيث لا يصلى فيه، ولهم بيع مسجد عتيق لم يعرف بانيه وصرف ثمنه في مسجد آخر. الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (4 / 358): (ولو خرب ما حوله واستغني عنه يبقى مسجدا عند الإمام والثاني) أبدا إلى قيام الساعة (وبه يفتي) حاوي القدسي (وعاد إلى الملك) أي ملك الباني أو ورثته (عند محمد)۔
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔