021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
جھگڑے کے دوران تم میری طرف سے آزاد ہو کہنے کاحکم
70354طلاق کے احکامالفاظ کنایہ سے طلاق کا بیان

سوال

عرض  یہ ہے کہ میری شادی کو 19 سال  ہوگئے ، شادی کے پانچ  سال  بعد کچھ گھریلو   جھگڑے کی  وجہ سے   میں نے    لفظ   طلاق  سے بیوی  کو ایک  طلاق  دی ،پھر  3/4 دن کے بعد  رجوع  کرلیا کچھ عرصے  بعد  جھگڑا  شروع  ہوگیا،   تو  میں  نے لفط طلاق  سے دوبارہ  طلاق  دی ،اس کے بعد  پھر رجوع کرلیا ۔اب تقریبا   چھ  ماہ  سے ہمارے  درمیان  دوبارہ   جھگڑا  شروع  ہوگیا  جس کی  بنیاد  تین باتین ہیں ،1۔موبائل کا استعمال  2۔  پک اینڈ  ڈراپ  3۔ مثلا  نو بجے آنے کا  کہا    تاخیر  ہوگئی  پوچھنے پر   یافون کرنے پر جھگڑا    شروع ہوجاتا ہے ۔

ایک  دن  پارک  میں  بیٹھے اپنی  تین باتوں پر  گفتگو  کر رہے  تھے  ،میں نے اچانک کہا   ,,اللہ رسول  کو  گواہ   بناکر کہتا  ہوں  کہ تم میری  طرف سے  آزاد  ہو،،﴿ میری  نیت  طلاق کی نہیں  تھی  یہ نیت  تھی  جن باتوں میں  جھگڑ ا ہے  ان میں  تم آزاد ہو، آنے جانے  پر فون زیادہ   استعمال  کرنے پر، اس بات پر  حلف  بھی اٹھا سکتا ہوں ﴾

پھر  ہمارے درمیان  ایک بات کا اضافہ  ہوگیا جس  کو میں  بیان  نہیں کرسکتا مطلب  یہ  ہے کہ میں  نے اس کو  کار میں فرنٹ سیٹ  پر بیٹھے کسی  اور کے ساتھ بات  چیت  کرتے دیکھا ،اس کے علاوہ  کچھ  نہیں ،پھر  ہمارے  اس بات پر  جھگڑا  شروع ہوگیا یہ جھگڑا   20  دن  تک جاری رہا ،، پھر  ایک رات  میں نے اس کو  ڈھائی  بجے جگایا ﴿ مقصد  کچھ اور  تھا﴾مگر  بات بات  میں لڑائی کی نوبت آگئی ،میں  نے اس  سے کہا کہ تمہاری  باتیں  تمہارے  گھر والوں کو  بتا دونگا ،اور  تمہیں ذلیل ورسوا کرونگا ،وہ  کچھ  دیر خاموش  رہی ، اس کے بعد غصے  میں  کہا  ابھی سب کو  جگاؤ  اور سب کو بتا کر  ابھی چھوڑ دیں ۔میں میں کچھ دیر  خاموش ہوگیا پھر  میں نے وہی لفظ دہرایا کہ,, میں اللہ اور رسول کو  گواہ بناکر کہتا  ہوں  کہ تم میری طرف  سے آزاد ہو ،،  اب کے دفعہ  بھی نیت صاف کہ مرد کچھ کر تو  نہیں سکتا ۔ اب کے دفعہ  بھی  نیت  یہی  تھی  جس کو فون کرنا ہے کرو ،اور جس کے ساتھ  چاہو گھومو پھرو۔

میں  اس پر حلف  اٹھا سکتا ہوں کہ  میری نیت  طلاق کی نہ تھی، اس کا  ثبوت  یہ  ہے کہ  میں نے پہلے دو مرتبہ  لفظ طلاق  سے  طلاق دی ہے ۔میری  نیت اللہ کی امانت  جان کر   بتا  دیں کہ  ہمارا نکاح باقی ہے یانہیں ؟

o

صورت مسئولہ میں دوطلاقیں  تو پہلے  واقع ہوچکی ہیں ، تیسری  دفعہ بیوی سے لڑائی کے دوران جب شوہرنے کہا کہ  ,, میں  اللہ اور  رسول کو  گواہ  بناکر  کہتا ہوں کہ  تم میری طرف سے  آزاد ہو ،، چونکہ  یہ  جملہ  ہمارے عرف  میں  صریح  طلاق کے لئے استعمال ہوتا ہے ،اس میں  نیت کی  ضرورت  نہیں ہوتی ،لہذا اس سے  تیسری  طلاق  واقع ہوگئی۔

  اس طرح بیوی تین طلاق مغلظہ   کے ساتھ  شوہر پر حرام ہوچکی ہے اوردونوں کانکاح  ختم  ہوگیا ، تیسری طلاق کے بعد  جو ہمبستری  کی اور  میاں بیوی کی حیثیت سے  زندگی  گذاری  یہ ناجائز  اور  حرام  کام ہو  ا ۔آپ  دونوں  پر لازم ہے کہ فوری  علیحدگی  اختیار  کریں ، اورابتک  جو عمل ہوا  اس سے توبہ کریں ،  حلالہ  شرعیہ  کے بغیرآپس میں   دوبارہ  نکاح بھی  نہیں  ہوسکتا ہے ۔

حلالہ  شرعیہ  یہ ہے کہ﴿ شوہر کی عدت تین ماہواری  گذرنے کے  بعد  عورت  کسی  دوسری جگہ  غیر  مشروط  شادی کرلے  اس کے بعددوسرا شوہر ہمبستری کرے ،پھر  وہ شوہراپنی  مرضی سے طلاق دیدے یا اس کی  وفات ہوجائے  ،پھر  دوسرے  شوہر کی عدت بھی  گذر جائے ، اس کےبعد آپس  کی رضامندی  سے نئے مہر کے عوض میں   دوبارہ نکاح ہو سکتا ہے﴾      

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (3/ 299)
 قوله سرحتك وهو " رهاء كردم " لأنه صار صريحا في العرف على ما صرح به نجم الزاهدي الخوارزمي في شرح القدوري اهـ وقد صرح البزازي أولا بأن: حلال الله علي حرام أو الفارسية لا يحتاج إلى نية، حيث قال: ولو قال حلال " أيزدبروي " أو حلال الله عليه حرام لا حاجة إلى النية، وهو الصحيح المفتى به للعرف وأنه يقع به البائن لأنه المتعارف ثم فرق بينه وبين سرحتك فإن سرحتك كناية لكنه في عرف الفرس غلب استعماله في الصريح فإذا قال " رهاكردم " أي سرحتك يقع به الرجعي مع أن أصله كناية أيضا، وما ذاك إلا لأنه غلب في عرف الفرس استعماله في الطلاق وقد مر أن الصريح ما لم يستعمل إلا في الطلاق من أي لغة كانت، لكن لما غلب استعمال حلال الله في البائن عند العرب والفرس وقع به البائن ولولا ذلك لوقع به الرجعي.
نوٹ ؛ یاد رہے  کہ  کسی  معاملہ  میں یہ  کہنا کہ  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ  وسلم کو  گواہ  بناکر کہتا ہوں جائز نہیں   ہے ، سائل پر اس سے بھی توبہ لازم ہے ۔  

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

       دارالافتاء جامعة الرشید    کراچی

۷ ربیع  الاول  ١۴۴۲ھ

 

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔