021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
مجہول ایجاب پر مبنی نکاح کا حکم
70626نکاح کا بیاننکاح کے منعقد ہونے اور نہ ہونے کی صورتیں

سوال

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس بارے میں کہ نکاح خواں نے دلہن کے وکیل سے کہا : فلانہ بنت فلاں کو میں نے نکاح میں دیا،یعنی دلہا کا نام نہیں لیا اور نہ ہی اس کی طرف اشارہ کیا ۔پھر دلہا سے کہا :آپ نے قبول کیا ؟ تو اس نے قبول کرلیا۔اب پوچھنا یہ ہے کہ اس  عقد میں ایجاب درست ہے یا نہیں؟اور یہ نکاح منعقد ہوا ہے  یا نہیں؟

o

عقد نکاح کے موقع پرعموما گواہوں اورفریقین کےموجود رشتہ داروں کوپہلے سےیہ بات معلوم ہوتی ہے کہ کس شخص کا نکاح کس عورت  کے ساتھ کیا جارہا ہےاور عاقدین متعین ہوتے ہیں، لہذا ایجاب وقبول  کرتے وقت کوئی لفظ چھوٹ جائے تو اس سے  عقد کےصحیح ہونے پر کوئی اثرنہیں پڑتا۔لہذا مذکورہ بالا نکاح درست ہےاور نکاح منعقد ہوگیا ہے۔

حوالہ جات

قال ابن الہمام رحمہ اللہ : وعرف من تعريف الإيجاب والقبول بأنهما اللفظان الصالحان لإفادة ذلك العقد عدم الاختصاص بالعربية.وعدم لزوم ذكر المفعولين أو أحدهما بعد دلالة المقام والمقدمات على الغرض؛ لأن الحذف لدليل جائز في كل لسان.(فتح القدیر:3/190)
قال الإمام  العلامة ابن نجیم رحمہ اللہ : أطلق في اللفظين فشمل اللفظين حكما، وهو اللفظ الصادر من متولي الطرفين شرعا، وشمل ما ليس بعربي من الألفاظ، وما لم يذكر معهما المفعولان أو أحدهما بعد دلالة المقام والمقدمات؛ لأن الحذف لدليل كائن في كل لسان. (البحر الرائق:3/87)

   سعد خان

 دارالافتاءجامعۃالرشید کراچی

 2/ربیع الثانی/1442ھ

n

مجیب

سعد خان بن ناصر خان

مفتیان

فیصل احمد صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔