021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
نماز میں ایک سجدہ چھوڑنے کا حکم
71273نماز کا بیانسجدہ سہو کابیان

سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ جس طرح تین سجدے یا دو رکوع کرنے پر سجدہ سہو واجب ہوتا ہے ،کیا اسی طرح فقط ایک سجدہ کرنے پر بھی سجدہ سہو واجب ہے؟ رہنمائی فرمائیں ۔

o

سجدہ نماز کے فرائض میں سے ہے ،لہذا اگر کسی نے نماز میں ایک سجدہ بالکل چھوڑ دیا تو نماز فاسد ہوجائے گی،دوبارہ پڑھنا فرض ہے ،اور اگر نماز کے اندر ہی بھول کر رہ جانے والا سجدہ کرلیا تو اس صورت میں سجدہ سہو واجب ہوگا اور نماز ہوجائے گی۔

حوالہ جات

قال العلامۃ الحصکفی رحمہ اللہ : ومن فرائضھا التی لا تصح بدونھا التحریمۃ .....ومنھا السجود.(درالمختار:2/135)
قال العلامۃ نظام الدین رحمہ اللہ :السجود الثانی فرض کالأول بإجماع الأمۃ ،کذا فی الزاھدی.وقال أیضا: وفی الولوالجیۃ :الأصل فی ھذا أن المتروک  ثلاثۃ أنواع :فرض، وسنۃ،ووجب ، ففی الأول أمکنہ التدارک  بالقضاء یقضی وإلا فسدت صلاتہ ،ولا یجب السجود إلا بترک واجب ،أو تأخیررکن ،أو تقدیمہ أو تکرارہ ،أو تغییر واجب بأن یجھر فیما یخافت ،وفی الحقیقۃ وجوبہ بشیءواحد،وھو ترک الواجب ،کذا فی الکافی.(الفتاوی الھندیۃ:1/77،126)
قال العلامۃ الکاسانی رحمہ اللہ: والشرع  لماجعل السجود جابرا لما فات سھوا ،کان مثلا للفائت سھوا ،وإذا کان مثلا للفائت سھوا ،کان دون ما فات عمدا ،والشی ء لا ینجبر بما ھو دونہ ، ولھذا لاینجبر بہ النقص المتمکن بفوات الفرائض .(بدائع الصنائع:1/167)

سردارحسین

دارالافتاء،جامعۃ الرشید،کراچی

12/جمادی الثانیۃ/1442ھ

n

مجیب

سردارحسین بن فاتح رحمان

مفتیان

فیصل احمد صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔