021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
گردن کا مسح سنت ہے یا مستحب
72308پاکی کے مسائلوضوء کی سنتیں،آداب اور مکروہات

سوال

جب  سنت میں گردن کا مسح ثابت نہیں تو یہ مستحب کیسے ہے؟نیز مستحب اور سنت غیر مؤکدہ میں فرق بتادیں ؟

o

 علماء سے گردن کے مسح کے بارے میں   دو قسم کے اقوال منقول  ہیں، البتہ راجح قول استحباب کا ہے ، اور یہی صحیح حح  ہے ،کیونکہ  احادیث وآثارصحابہ سے نفسِ مسح  کا  ثبوت تو ہے،لیکن اس پر آپ علیہ السلام سے مواظبت ثابت نہیں ہے۔

 مستحب اور سنت غیر مؤکدہ میں فرق:

مستحب:اس  سے مراد وہ عمل ہے جو آپﷺ نے زندگی میں  ایک یا دو مرتبہ کیا ہو، اور اس پر مواظبت نہیں فرمائی  ہو۔

سنت غیر مؤکدہ :اس سے مراد وہ عمل ہے جس پر آپ ﷺ نے مواظبت فرمائی ہو،لیکن کبھی کبھار اس کو ترک بھی کیا ہو۔

حوالہ جات

شرح سنن أبي داود لابن رسلان (2/ 71)
عَن مُوسى بن طلحة قال: من مَسَحَ قفاهُ مَعَ رأسه وُقي الغل يَوم القيامة . وهذا الحَديث وإن كان مَوقوفًا فلهُ حكم المرفوع؛ لأن هذا لا يقال من قِبَل الرأي، فَهو على هذا مُرسَل ۔
التلخيص الحبير ط العلمية (1/ 288)
ابن عمر أن النبي صلى الله عليه وسلم قال: "من توضأ ومسح بيديه على عنقه وقي الغل يوم القيامة" وقال هذا إن شاء الله حديث صحيح.
تبيين الحقائق شرح كنز الدقائق وحاشية الشلبي (1/ 6،28)
(قوله في المتن ومسح رقبته) وقال في الاختيار ومسح الرقبة قيل سنة وقيل مستحب انتهى(ومسح رقبتہ) وھو قول الفقیہ أبی جعفر وبہ أخذ کثیر من العلماء کذافی شرح مسکین وفی الخلاصۃ الصحیح انہ أدب وھو بمعنی المستحب۔
المهذب في علم أصول الفقه المقارن (1/ 236)
والمستحب: هو ما فعله النبي - صلى الله عليه وسلم - ولم يواظب عليه، بل فعله مرة أو مرتين.
القاموس الفقهي لغة واصطلاحا (ص: 185)
 السنة غير المؤكدة:وهي ما واظب رسول الله صلى الله عليه وسلم عليها مع الترك أحيانا.

وقاراحمد بن اجبرخان

 دارالافتاءجامعۃ الرشید کراچی

   ۲۰رجب۱۴۴۲

n

مجیب

وقاراحمد بن اجبر خان

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔