021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
صاحب نصاب پر بالغ ہونے کے بعد زکوۃ کی ادائیگی کب لازم ہوتی ہے ؟
71805زکوة کابیانسونا،چاندی اور زیورات میں زکوة کے احکام

سوال

اگر پہلے سے صاحب   نصاب ہوں تو بالغ ہونے کے بعد فوری زکوۃ ادا کرنی ہو گی یا ایک سال گزرنے پر زکوۃ دینی ہو گی ؟

o

اگر نابالغ لڑکا صاحب نصاب ہو توبالغ ہونے کے فورا بعد زکوۃ ادا کرنا لازم نہیں ہو گا بلکہ ایک سال گزرنے پر زکوۃ دینی ہو گی ۔

حوالہ جات

الفتاوى الهندية (1/ 172)
وكذا الصبي إذا بلغ يعتبر ابتداء الحول من وقت بلوغه هكذا في التبيين وتجب على المغمى عليه، وإن استوعب الإغماء حولا كاملا كذا في فتاوى قاضي خان
 
 
تبيين الحقائق شرح كنز الدقائق وحاشية الشلبي (1/ 253)
 لا إشكال في أن الصبي إذا بلغ يعتبر ابتداء حوله من وقت بلوغه، وكذا إذا أفاق المجنون الأصلي، وهو الذي بلغ مجنونا يعتبر أول مدته من وقت إفاقته

عبدالدیان اعوان

دارالافتاء جامعۃ الرشید کراچی

2 رجب 1442

n

مجیب

عبدالدیان اعوان بن عبد الرزاق

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔