021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
اہل میت کو کھانا پہنچانےکی مدت
72104جنازے کےمسائلایصال ثواب کے احکام

سوال

میت کے گھر والوں کے لیے کتنے دن تک کھانا پہنچانا مسنون ہے؟

o

صرف ایک دن رات تک کھانا بھیجنے کی ترغیب ہے، اس سے زیادہ کی ترغیب نہیں ،بلکہ بعض فقہاء کرام نے اسے مکروہ بھی لکھا ہے۔ (آپ کے مسائل اور ان کا حل:ج۱،ص۱۴۸)

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (2/ 240)
(قوله وباتخاذ طعام لهم) قال في الفتح ويستحب لجيران أهل الميت والأقرباء الأباعد تهيئة طعام لهم يشبعهم يومهم وليلتهم، لقوله - صلى الله عليه وسلم - «اصنعوا لآل جعفر طعاما فقد جاءهم ما يشغلهم» حسنه الترمذي وصححه الحاكم ولأنه بر ومعروف، ويلح عليهم في الأكل لأن الحزن يمنعهم من ذلك فيضعفون. اهـ.

نواب الدین

دار الافتاء جامعۃ الرشید کراچی

۱۱رجب۱۴۴۲ھ

n

مجیب

نواب الدین صاحب

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔