021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
اہل محلہ کی آمادگی کے بغیر امام کا کسی مدرسہ پر قابض ہونا
72177نماز کا بیانامامت اور جماعت کے احکام

سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ اک حافظ کا دوسرےگاؤں سے بعض معاملات کی وجہ سے اخراج ہو گیا۔اب وہ  ہماری مسجد میں شوریٰ کی اجازت کے بغیر  زبردستی آگیا ہے۔اورحجرے پہ قابض ہو گیا ہے۔کچھ ساتھی جھگڑے سے بچتے ہوئے الگ ہوگئے ہیں۔تناؤ کی کیفیت ہے۔

                         1۔اکثر بچوں کی وجہ سےنماز میں خلل واقع ہوتا  ہے۔مسجد کی بجلی بھی استعمال کرتا ہے۔باہر سے چندہ بھی کرتا ہے اور کسی کا مامور نہیں۔

                         2۔یہ شخص خود دوسرے شہر چلا گیا ہےاورپیچھے اک سادہ حافظ کو کہہ گیا ہےجو تقریبادووقت آتا ہےکچھ دیرکیلیے۔باقی وقت ان بچوں کا کوئی  نگرانی کرنے والا نہیں۔

o

اہل محلہ کی اجازت کے بغیر یوں کسی شخص کا کسی مسجد و مدرسہ پر قابض ہونا کسی طور پر درست نہیں ۔ایسے شخص کی امامت مکروہ تحریمی ہے جس سے اس کے مقتدی کسی معقول وجہ سے  خوش نہ ہوں اور پھر بھی وہ امامت پر اصرار کرے ۔جیسا کہ حضرت عبد اللہ بن عمرو  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا:’’تین آدمیوں کی نماز اللہ تعالیٰ قبول نہیں فرماتے، پہلا وہ شخص جو امامت کے لیے کسی قوم کے آگے بڑھے جب کہ لوگ اسےناپسند کرتے ہوں۔(سنن الترمذي ت شاكر (2/ 193)

حضرت عمرو بن حارث  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  سے روایت ہے انھوں نے فرمایا یہ بات کہی جاتی تھی کہ لوگوں میں سے جنہیں سخت عذاب سے دوچار کیا جائے گا وہ دو ہیں ، ایک ایسی عورت جو اپنے خاوند کی نافرمان  ہو اور  دوسرا  وہ  امام  جسے

مقتدی ناپ اسی طرح سند کرتے ہوں۔

اور پھر مذکورہ شخص نے قابض ہونے کے بعد اپنے نائب کو مدرسہ میں چھوڑا ہے اور اس پر بھی اہل محلہ راضی نہیں ہیں ،مزید یہ کہ وہ مسجد و مدرسہ کی کمیٹی کی اجازت کے بغیر چندہ بھی جمع کرتا ہے اور کسی کے تابع بھی نہیں ،تو یہ وہ تمام باتیں ہیں جو نہ تو قانونا درست ہیں اور نہ ہی شرعا ۔ اہل محلہ میں سے جو بااثر لوگ ہوں ان کے  سامنے اس مسئلہ کو رکھا جائے اور اس فتوی کی روشنی میں  مسئلے کا مستقل حل نکالا جائے۔

                       

حوالہ جات

قال العلامۃ  الحصکفی رحمہ اللہ:ولو أم قومًا وہم لہ کارہون إن الکراہة لفساد فیہ أو لانہم أحق بالإمامة منہ کرہ ذلک تحریمًا . (الدر مع الرد: 2/297)
                                                وروی الامام البیھقی رحمہ اللہ :عن ابن عمر قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: " اجعلوا أئمتكم خياركم، فإنهم وفدكم فيما بينكم وبين ربكم ". (السنن الكبرى للبيهقي :3/ 129)
                                                و روی ایضا:عن أوس بن ضمعج قال: سمعت أبا مسعود الأنصاري يقول: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: " يؤم القوم أقرؤهم لكتاب الله، فإن كانوا في القراءة سواء، أظنه قال: فأعلمهم للسنة، فإن كانوا في السنة سواء فأقدمهم هجرة، فإن كانوا في الهجرة سواء فأقدمهم سنا، ولا يؤم الرجل في سلطانه، ولا يجلس على تكرمته في بيته إلا بإذنه ". (السنن الكبرى للبيهقي :3/ 128)
                                                و روی الامام الترمذی رحمہ اللہ: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: " ثلاثة لا تجاوز صلاتهم آذانهم: العبد الآبق حتى يرجع، وامرأة باتت وزوجها عليها ساخط، وإمام قوم وهم له كارهون " .
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                   (سنن الترمذي ت شاكر (2/ 193)
                                                وروی  ایضا: عن عمرو بن الحارث بن المصطلق، قال: كان يقال: [ص:193] " أشد الناس عذابا اثنان: امرأة عصت زوجها، وإمام قوم وهم له كارهون ".( سنن الترمذي ت شاكر (2/ 192)

   محمد عثمان یوسف

     دارالافتاءجامعۃ الرشید کراچی

          18 رجب المرجب 1442ھ

n

مجیب

محمد عثمان یوسف

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔