021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
بیوہ،دوبھائی اورایک بہن میں میراث کی تقسیم
74156میراث کے مسائلمیراث کے متفرق مسائل

سوال

کیافرماتےہیں علماءکرام اس مسئلہ کےبارےمیں کہ ایک آدمی کاانتقال ہوا،اس کےورثہ میں ایک بیوہ،دوبھائی اورایک بہن ہیں،میراث میں 126مرلہ جگہ ہےتوورثہ میں میراث کی تقسیم کیسےہوگی؟

 

o

مرحوم کی میراث اس طرح تقسیم ہوگی کہ بیوہ کوکل میراث کاچوتھائی ملےگا،باقی مال اس طرح تقسیم کیاجائےگاکہ دونوں بھائیوں کوبہن کےمقابلےمیں دوگناحصہ دیاجائےگا۔

موجودہ مسئلہ میں مرحوم کی جتنی جائیداداوردیگرمال ہے،ان سب  کی قیمت لگاکر20حصوں میں تقسیم کیاجائے،پانچ حصے(کل مال کا25فیصد)بیوہ کو،6حصے(30،30فیصد)مرحوم کےہربھائی کواورایک حصہ(15فیصد)مرحوم کی بہن کودیاجائےگا۔

حوالہ جات

.....

محمدبن عبدالرحیم

دارالافتاءجامعۃالرشیدکراچی

11/صفر 1443 ھج

n

مجیب

محمّد بن حضرت استاذ صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔