021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
اگرماں گھرمیں داخل ہوئی توعورت پرطلاق ثلثہ سےمتعلق سوال
74893طلاق کے احکامطلاق کو کسی شرط پر معلق کرنے کا بیان

سوال

سوال:حیلہ:عورت کوایک طلاق رجعی دے،عدت گزرنےپرعورت نکاح سےباہرہوئی،ماں کوگھرمیں لائے،پھرتھوڑےمہرکےساتھ نکاح کریں،اس میں حلالہ کی بھی ضرورت نہیں ہوگی۔ردالمحتار:ج2صفحہ574

کیایہ صورت مسئلہ صحیح ہے؟وضاحت کریں

توضیح:طلاق رجعی میں توبغیرنکاح کےرجوع کرسکتاہے،پھرنکاح کی کیاضرورت ہوئی؟

 

o

مذکورہ بالاحیلہ درست ہےاس لیےکہ جس وقت شرط پائی گئی(ماں گھرمیں داخل ہوئی)اس وقت بیوی نکاح میں نہیں تھی توطلاق ثلثہ واقع نہیں ہوں گی۔ہاں اگربیوی عدت میں ہو،اس وقت ماں گھرمیں داخل ہوئی توشرط کےپائےجانےسےطلاق واقع ہوجائیں گی۔

طلاق رجعی میں  بغیرنکاح کےدوبارہ رجوع ہوسکتاہے،لیکن اس وقت تک جب تک طلاق کی عدت نہ گزری ہو،اگرطلاق رجعی کی عدت گزرجائےتوطلاق رجعی بائنہ بن جاتی ہےاورنکاح ختم ہوجاتاہے،صورت مسئولہ میں اس وجہ سےدوبارہ نکاح ضروری ہوگا۔

حوالہ جات

"الهداية"1 /  254: وإذا طلق الرجل امرأته تطليقة أو تطليقتين فله أن يراجعها في عدتها رضيت بذلك أو لم ترض لقوله تعالى : { فأمسكوهن بمعروف } [ البقرة : 231 ] من غير فصل ولا بد من قيام العدة لأن الرجعة استدامة الملك ألا ترى أنه سمي إمساكا وهو الإبقاء وإنما يتحقق الاستدامة في العدة لأنه لا ملك بعد انقضائها والرجعة أن يقول راجعتك أو راجعت امرأتي وهذا صريح في الرجعة ولا خلاف فيه بين الأئمة۔
"الفتاوى الهندية"10 /  180:وتنقطع الرجعة إن حكم بخروجها من الحيضة الثالثة إن كانت حرة۔                                                                                                                                                                                                                                                                                                                     

محمدبن عبدالرحیم

دارالافتاءجامعۃالرشیدکراچی

25/ربیع الثانی  1443 ھج

n

مجیب

محمّد بن حضرت استاذ صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔