021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
لڑکے کا لڑکی کی طرف سے اپنے ہی نکاح کیلئے وکیل بننے کا حکم
74929نکاح کا بیاننکاح کی وکالت کابیان

سوال

اگر کسی بالغ لڑکی نے اپنے ہونے والے شوہر کو ہی نکاح کا وکیل بنا لیا اور پھر شوہر نے گواہوں کی موجودگی میں نکاح کرلیا تو کیا یہ نکاح منعقد ہو گیا یا نہیں؟

o

ہونے والے شوہر کا لڑکی کی طرف سے وکیل بن کر گواہوں کی موجود گی میں خود اپنا نکاح کرنے سے نکاح منعقد ہو  جائے گا۔

حوالہ جات

بدائع الصنائع في ترتيب الشرائع :(2/ 247)
وعلى هذا يبنى ‌الحرة ‌البالغة ‌العاقلة إذا زوجت نفسها من رجل أو وكلت رجلا بالتزويج فتزوجها أو زوجها فضولي فأجازت جاز في قول أبي حنيفة وزفر وأبي يوسف الأول سواء زوجت نفسها من كفء أو غير كفء بمهر وافر أو قاصر غير أنها إذا زوجت نفسها من غير كفء فللأولياء حق الاعتراض۔
الدر المختار شرح تنوير الأبصار وجامع البحار (ص188):
(‌كما ‌للوكيل) الذي وكلته أن يزوجها من نفسه، فإن له (ذلك) فيكون أصيلا من جانب وكيلا من آخر (بخلافما لو وكلته بتزويجها من رجل فزوجها من نفسه) لانها نصبته مزوجا لا متزوجا۔

محمد انس جمیل

 دارالافتا ءجامعۃالرشید کراچی

‏  ١۳/۰٥/١٤٤٣                                                                

n

مجیب

محمد انس ولدمحمد جمیل

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔