021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
داماد کا سوتیلی ساس سے پردہ کا حکم
73340جائز و ناجائزامور کا بیانپردے کے احکام

سوال

ایک لڑکی ہے اس کی والدہ فوت ہو گئی ہے اس کے والد نے دوسری شادی کر لی اب اگر اس لڑکی کی شادی ہوتی ہے تو کیا اس کے والد کی دوسری بیوی کا اس لڑکی کے شوہر سے پردہ ہو گا ؟

o

سوتیلی ساس داماپر حرام نہیں ، داماد کا سوتیلی ساس  سے اگر وہ کسی کے نکاح میں نہ ہو ،نکاح ہو سکتا ہے۔لہذا  مذکورہ صورت میں والد کی دوسری بیوی اس لڑکی کے شوہر سے پردہ کرے گی۔

حوالہ جات

{وَأُحِلَّ لَكُمْ مَا وَرَاءَ ذَلِكُمْ } [النساء: 24]
بدائع الصنائع في ترتيب الشرائع (2/ 263)
{وأحل لكم ما وراء ذلكم} [النساء: 24] أي: ما وراء ما حرمه الله تعالى، .........، ويجوز الجمع بين امرأة وبنت زوج كان لها من قبل، أو بين امرأة وزوجة كانت لأبيها وهما واحد؛ لأنه لا رحم بينهما فلم يوجد الجمع بين ذواتي رحم.
البحر الرائق شرح كنز الدقائق ومنحة الخالق وتكملة الطوري (3/ 105)
 وقد جمع عبد الله بن جعفر بين زوجة علي وبنته ولم ينكر عليه أحد.

 محمد عبدالرحمن ناصر

دارالافتا ءجامعۃالرشید کراچی

05/11/1442

n

مجیب

محمد عبدالرحمن ناصر بن شبیر احمد ناصر

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔