021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
ایکسیڈنٹ میں جاں بحق اور زخمی لوگوں کی ضمان کا حکم
75289قصاص اور دیت کے احکاممتفرق مسائل

سوال

کیا فرماتے ہیں علماءکرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ  ایک رکشے میں دو،تین افراد بیٹھے تھے،جن میں میرا بھتیجا بھی تھا۔اسی دوران ایک گاڑی نے پیچھے سے رکشے کو ٹکر ماری،جس کی وجہ سے ایک بندہ عین موقع پر انتقال کر گیا اور میرا بھتیجا زخمی ہوگیا جو کہ تقریبا دو مہینے تک ہسپتال میں زیر علاج رہا۔اب میرا سوال یہ  ہے کہ کیا مذکورہ صورت میں ڈرائیور پر مقتول کی  دیت اور زخمی شخص کےعلاج کا خرچہ ادا کرناواجب ہوگا یا نہیں؟

o

مذکورہ صورت میں ٹکر مارنے والی گاڑی کے ڈرائیور پر مقتول کے  ورثہ کو دیت اور زخمی شخص کے علاج کا خرچہ دونوں ادا کرنا لازم ہے۔

زخمی شخص کے علاج کےخرچے کا تعیین عدالت،جرگہ یا پنچائت وغیرہ کی طرف سے ہوگا۔اور قتل کی صورت چونکہ  شبہ عمد یا خطا  کی ہے،لہذا ڈرائیور پر دیت کےساتھ کفارہ بھی لازم ہوگا۔کفارہ کی تفصیل یہ ہے کہ قاتل دو ماہ مسلسل روزہ رکھنے کے ساتھ توبہ و استغفار بھی کرتا رہے۔

    دیت کی تفصیل یہ ہے کہ ایک مقتول کی دیت کی مقدار دس ہزار درہم(2625 تولے چاندی)  ، یا ایک ہزار دینار(375 تولے سونا)  ،یا سو اونٹ ،یا ان میں سے کسی ایک کی قیمت  یا عدالت کی مقرر کردہ قیمت ہے۔یہاں یہ بھی یاد رہے کہ اگر مقتول کے ورثہ ڈرائیور کو معاف کرنا چاہیں یا  دیت سے کم قیمت پر صلح کرنا چاہیں تو اس کی بھی گنجائش ہے۔

    دیت ڈرائیور اور اس کے عاقلہ پر واجب ہوگی۔عاقلہ قاتل کا خاندان  ہوگا، نیز اگر  ڈرائیور  کا تعلق کسی انجمن یا ادارے سے ہے تو وہ بھی عاقلہ میں شمار ہوگا۔عاقلہ سے دیت تین سال میں وصول کی جائے گی۔

 

حوالہ جات

 قال جماعۃ من العلماء:وإن كان صاحب الدابة راكبا على الدابة، والدابة  تسير، إن وطئت بيدها أو برجلها يضمن، وعلى عاقلته الدية، وتلزمه الكفارة.(الفتاوی الھندیۃ:6/60 )   
               وأیضا قالوا:والجراحات التي في غير الرأس والوجه ففيها حكومة إذا أوضحت العظم، أو كسرته إذا بقي لها أثر، وإن لم يبق للجراحة أثر فعند أبي حنيفة وأبي يوسف رحمهما الله تعالى   لا شيء عليه، وعند محمد   رحمه الله   يلزمه قيمة ما أنفق عليه إلى أن يبرأ، كذا في محيط السرخسي.          
(الفتاوی الھندیۃ:6/35)        
قال العلامۃ  فرید الدین رحمہ اللہ:وما کان في غیر الوجہ والرأس  یسمی جراحۃ،والحکم مرتب علی الحقیقۃ في الصحیح حتی لو تحققت في غیرھا کالساق والصدروالید تجب حکومۃ عدل.
(الفتاوی التاتارخانیۃ:19/40)
وقال المفتي محمد  تقي العثمانی حفظہ  الله: الأصل أن  سائق السیارۃ مسؤول عن کل ما یحدث بسیارته  خلال تسییرہ إیاھا،وذالك ؛لأن السیارۃ آلۃ فی یدہ،وھو یقدر علی ضبطھا،فکل ما ینشأ عن السیارۃ ،فإنہ مسؤول عنہ....  والذي یظھر لي  في ضوء  القواعد  والجزئیات الفقھیۃ التي  ذکرتھا فیما قبل -واللہ أعلم - أن السائق یضمن  الضرر الذی باشرہ،وإن لم یکن متعدیا؛لأنہ قد تقرر بإجماع الفقھاء أن المباشر لایشترط لتضمینہ أن یکون متعدیا،ولکن یجب أن تتحقق منہ مباشرۃ الضرر علی الوجہ ذکرناہ من تفسیر القاعدۃ الثانیۃ،فیجب لتضمینہ أن تصح نسبۃ المباشرۃ  إلیہ دون مزاحم علی وجہ معقول.     (بحوث فی قضایا الفقھیۃ المعاصرۃ:1/298 )
  وقال العلامة الزيلعي رحمه الله:قال رحمه الله  :(والخطأ مائة من الإبل أخماسا ابن مخاض وبنت مخاض وبنت لبون وحقة وجذعة) أي دية الخطأ مائة من الإبل أخماسا....قال  رحمه الله :(أو ألف دينار أو عشرة آلاف درهم) أي الدية من الذهب ألف دينار ،ومن الورق عشرة آلاف درهم.(تبيين الحقائق:7/267)
وقال العلامة الكاساني رحمه الله: وأما  بيان من تجب عليه الدية فالدية تجب على القاتل؛ لأن سبب الوجوب هو القتل، وإنه وجد من القاتل، ثم الدية الواجبة على القاتل نوعان: نوع يجب عليه في ماله، ونوع يجب عليه كله، وتتحمل عنه العاقلة، بعضه بطريق التعاون إذا كان له عاقلة، وكل دية وجبت بنفس القتل الخطأ أو شبه العمد تتحمله العاقلة، وما لا فلا. (بدائع الصنائع:10/311)
وقال العلامة الحصكفي رحمه الله: (والعاقلة أهل الديوان) وهم العسكر ،وعند الشافعي: أهل العشيرة وهم العصبات (لمن هو منهم ،فيجب عليهم كل دية وجبت بنفس القتل).... (فتؤخذ من عطاياهم) أو من أرزاقهم....(في ثلاث سنين) من وقت القضاء....(وإن لم يكن) القاتل (من أهل الديوان ،فعاقلته قبيلته) وأقاربه وكل من يتناصر هو به، تنوير البصائر.(وتقسم) الدية (عليهم في ثلاث سنين.   (الدرالمختار:10/325)

  کاظم علی                                                                                                                                               

دارالافتاء جامعۃالرشید ،کراچی

9/جمادی الالثانیہ/1443ھ

n

مجیب

کاظم علی بن نادر خان

مفتیان

فیصل احمد صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔