021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
ڈاکٹر کا قرض کی شرط پر لیب میں سیمپل بھجوانے کا حکم
77110خرید و فروخت کے احکامقرض اور دین سے متعلق مسائل

سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ میری ایک لیبارٹری ہے ،ایک ڈاکٹر صاحب سے بات ہوئی ہے کہ آپ ہمیں سیمپل ٹیسٹ وغیرہ دیں ، ان کا کہنا یہ ہے کہ آپ مجھے دو لاکھ روپے دے دیں ،میں آپ کے ساتھ کام شروع کردوں گا ، اور یہ دو لاکھ روپے  میں آپ کو ہر مہینے  پندرہ ہزار روپے کی صورت میں واپس کردیا کروں گا ۔

                                    ڈاکٹر صاحب دو لاکھ روپے اس لیے مانگ رہے ہیں کہ ایک دوسری لیب سے پہلے بات ہوئی ہے ،یہ پیسے ان کو واپس کردوں تو ان سے کام ختم کرکے آپ کو سیمپل دینا شروع کردوں گا۔ کیونکہ میرے پاس خود پیسے نہیں ،اور میں خود اس لیبارٹری کے رزلٹ سے مطمئن نہیں ہوں ۔

اب ان ڈاکٹر صاحب کے ساتھ میری یہ ڈیل جائز ہے کہ نہیں؟ آج کل جس بھی داکٹر سے ہم بات کرتے ہیں ان میں سے اکثر یہی کہتے ہیں آپ ہمیں ایڈوانس دیں پھر وہ ہم واپس کردیں گے !

                 

o

  یہ بات ڈاکٹر کے فرائض منصبی میں داخل ہے کہ وہ مریض کو علاج کے لیے بہترین دوا تجویز کرےاور اگر کسی ٹیسٹ وغیرہ کی ضرورت ہو تو لیبارٹری کا انتخاب  اس کے معیار کی وجہ سے کرے نہ کہ کسی ذاتی مفاد یا مصلحت کی بنا پر،چونکہ اس طرح  قرض یا کمیشن لینے کی صورت میں ڈاکٹر مریضوں کی مصلحت نظر انداز کرکے مراعات دہندہ کمپنیوں/ لیبارٹریوں سے ہی ٹیسٹ  تجویز کرتے ہیں، اس لیے اس طرح معاملہ کرنا جائز نہیں۔مزید یہ کہ اس طور پر ڈاکٹر صاحب کو رقم دینا قرض ہوگا،نیز ڈاکٹر صاحب قرض کی شرط پر سیمپل آپ کی لیب میں بھیجیں گے جوکہ ناجائز ہے؛ اس لیے کہ ہر وہ قرض جس پرمشروط طور پر کوئی نفع حاصل کیا جائے وہ سود کے زمرے میں آتا ہے ۔البتہ اگر قرض کی شرط کے بغیر ڈاکٹر صاحب آپ کی لیب کے معیار کی بنیاد پر ٹیسٹ بھیجتے ہیں تو جائز ہے ۔

                                                                                              

حوالہ جات

    قال العلامۃ الشامی رحمہ اللہ:قوله:( كل قرض جر نفعا حرام): أي إذا كان مشروطا كما علم مما نقله عن البحر، وعن الخلاصة وفي الذخيرة، وإن لم يكن النفع مشروطا في القرض، فعلى قول الكرخي لا بأس به.            ( رد المحتار علی الدر المختار:5/166)
و قال العلامۃ الکاسانی  رحمہ اللہ:(وأما) الذي يرجع إلى نفس القرض: فهو أن لا يكون فيه جر منفعة، فإن كان لم يجز، نحو ما إذا أقرضه دراهم غلة، على أن يرد عليه صحاحا، أو أقرضه وشرط شرطا له فيه منفعة؛ لما روي عن رسول الله  صلى الله عليه وسلم ، أنه "نهى عن قرض جر نفعا" ؛ ولأن الزيادة المشروطة تشبه الربا؛ لأنها فضل لا يقابله عوض، والتحرز عن حقيقة الربا، وعن شبهة الربا واجب هذا إذا كانت الزيادة مشروطة في القرض، فأما إذا كانت غير مشروطة فيه ،ولكن المستقرض أعطاه أجودهما؛ فلا بأس بذلك؛ لأن الربا اسم لزيادة مشروطة في العقد، ولم توجد، بل هذا من باب حسن القضاء، وأنه أمر مندوب إليه قال النبي عليه السلام : "خيار الناس أحسنهم قضاء" .
                                                             (بدائع الصنائع:7/395)
قال العلامۃ السرخسی رحمہ اللہ:قوله لا يرتشي المراد الرشوة في الحكم،وهو حرام. قال 
صلى الله عليه وسلم :الراشي والمرتشي في النارولما قيل لابن مسعود رضي الله عنه :الرشوة في الحكم سحت، قال ذلك الكفر، إنما السحت أن ترشو من تحتاج إليه أمام حاجتك.
                                                                                      (المبسوط للسرخسی:16/67)

   محمد عثمان یوسف

     دارالافتاءجامعۃ الرشید کراچی

  14 ذو القعدہ 1443ھ

n

مجیب

محمد عثمان یوسف

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔