021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
زندگی میں اولاد کوہبہ کرنا
77978ہبہ اور صدقہ کے مسائلہبہ کےمتفرق مسائل

سوال

ایک شخص کے تین بیٹے اورپانچ بیٹیاں ہیں،جن میں سے ایک بیٹے کاانتقال ہوگیاہے،والددومکانوں کے مالک ہیں،ایک مکان مہنگاہے اوردوسراوالا پہلے والے مکان کی بنسبت کچھ کم ہے اورایک پلاٹ بھی ملکیت میں ہے جس کوانہوں نے18 لاکھ روپے میں فروخت کردیا،والد نےایک مکان اپنے ایک بیٹے کودیااوردوسرامکان دوسرے بیٹے کودیا اور18 لاکھ روپےکاجوپلاٹ فروخت کیااس کی قیمت 5بیٹیوں میں تقسیم کردی،پوچھنایہ ہے کہ شرعی طورپراس طرح کرناکیساہے؟

o

زندگی  میں  اولاد کو کچھ دینا ہبہ ہے، میراث کی تقسیم نہیں ،اس میں شرعی تعلیم یہ ہے کہ ورثہ میں برابری کرتے ہوئے سب کواپنی ملکیت میں سےبرابر یاکم ازکم ہرلڑکی کولڑکے کے مقابلے میں نصف دیاجائے،بغیرکسی معقول وجہ کے کسی کوزیادہ دینامناسب نہیں،اگرکسی بیٹے یابیٹی کوخدمت زیادہ کرنے کی وجہ سے  یااقتصادی لحاظ سے کمزورہونے کی وجہ سے زیادہ دیاجائے توایسی صورت میں کوئی قباحت نہیں،لہذاصورت مسؤلہ میں اگر والدنے بیٹوں کوخدمت کرنے یامعاشی لحاظ سے کمزورہونےکی وجہ سے زیادہ قیمت والامکان دیاہے تویہ اقدام ان کادرست ہے اوراگربلاوجہ بیٹوں کوزیادہ دیاگیاہے تووالدکایہ عمل درست نہیں تھا،اس سے وہ گناہ گارہوئے،والدکی ملکیت میں اگرنقدی وغیرہ ہے تووالدکواس کی تلافی کرنی چاہیے۔

حوالہ جات

وفی السنن الكبرى للبيهقي وفي ذيله الجوهر النقي (ج 6 / ص 176):
عن حصين عن عامر قال سمعت النعمان بن بشير يقول وهو على المنبر : أعطانى أبى عطية فقالت له عمرة بنت رواحة : لا أرضى حتى تشهد رسول الله -صلى الله عليه وسلم- قال فأتى النبى -صلى الله عليه وسلم- فقال : إنى أعطيت ابن عمرة بنت رواحة عطية وأمرتنى أن أشهدك يا رسول الله قال :« أعطيت سائر ولدك مثل هذا ». قال : لا قال :« فاتقوا الله واعدلوا بين أولادكم ». قال فرجع فرد عطيته. رواه البخارى فى الصحيح عن حامد بن عمر وأخرجه مسلم من وجهين آخرين عن حصين.
وفی السنن الكبرى للبيهقي وفي ذيله الجوهر النقي (ج 6 / ص 177):
عن ابن عباس قال قال رسول الله -صلى الله عليه وسلم- :« سووا بين أولادكم فى العطية فلو كنت مفضلا أحدا لفضلت النساء ».
وفی خلاصة الفتاوی (ج: 4ص: 400):
رجل لہ ابن وبنت اراد ان یھب لھما فالافضل ان یجعل للذکرمثل حظ الانثیین عندمحمد وعند ابی یوسف رحمہ اللہ بینھماسواء ھو المختارلورود الآثار.
وفی رد المحتار (ج 24 / ص 42):
وفي الخانية لا بأس بتفضيل بعض الأولاد في المحبة لأنها عمل القلب ، وكذا في العطايا إن لم يقصد به الإضرار ، وإن قصده فسوى بينهم يعطي البنت كالابن عند الثاني وعليه الفتوى ولو وهب في صحته كل المال للولد جاز وأثم.
وفی رد المحتار (ج 24 / ص 42):
( قوله وعليه الفتوى ) أي على قول أبي يوسف : من أن التنصيف بين الذكر والأنثى أفضل من التثليث الذي هو قول محمد رملي.                                                                                                                                                                         وفی رد المحتار (ج 24 / ص 42):
وفي الخانية لا بأس بتفضيل بعض الأولاد في المحبة لأنها عمل القلب ، وكذا في العطايا إن لم يقصد به الإضرار ، وإن قصده فسوى بينهم يعطي البنت كالابن عند الثاني وعليه الفتوى ولو وهب في صحته كل المال للولد جاز وأثم.

محمد اویس بن عبدالکریم

دارالافتاء جامعۃ الرشید کراچی

08/03/1444

n

مجیب

محمد اویس صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔