021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
حرام مغز کے استعمال کاحکم
78089جائز و ناجائزامور کا بیانبچوں وغیرہ کے نام رکھنے سے متعلق مسائل

سوال

پیٹھ  کے اندر کی بڑی ہڈی   ہوتی  جو  گردن  سے لیکر  کمر تک ہوتی ہے ،جس کو صلب کہاجاتا  ہے ،اس کے اندر  سفید رنگ  کی رگ  ہوتی ہے ،اس  رگ کو  حرام  مغز کہاجاتا  ہے ،شرعا اس کے استعمال کاکیاحکم ہے ؟

o

فقہ  کی اکثر  کتابوں میں جہاں  حلال جانوروں کے اندر حرام  اجزاء کا ذکر ہے ،اس   میں حرام مغز  کا ذکر نہیں  ملتا  ہے ،بلکہ عموما  سات چیزوں کا ہی ذکر ہے ۔١۔ بہتا ہوا خون ۲۔ کپورے ۳۔نر کی  پشاب  گاہ ۴۔مادہ  کی پیشاب  گاہ  ۵۔غدود ٦۔مثانہ ۷۔پتہ ۔ان میں سے بہتا ہوا خون کا استعمال حرام ہے ،بقیہ چھ چیزوں  کا استعمال  مکروہ  تحریمی ہے ۔

البتہ بعض  فقہا نے حرام مغز کے استعمال کو بھی  ناجائز  کہا  ہے  ۔

چنانچہ فتاوی  رشیدیہ ص/  ۳۵۸ج/١۴ میں حضرت مولانا  رشید احمد  گنگوہی  رحمہ  اللہ نے  حلال  جانوروں کے حرام  اجزا   کے سلسلہ میں فرماتے  ہیں  کہ سات چیزحلال جانور کی کھانی منع ہیں ،ذکر ،فرج مادہ ،مثانہ ، غدود ، حرام  مغز جو  پشت  کے مہرہ  میں ہوتا  ہے،خصیہ ،پتہ الخ  ۔

حضرت  مفتی  محمد  شفیع صاحب  رحمہ اللہ  نے فتاوی رشیدیہ کے جواب کے  متعلق فرما یاکہ احقر  کو  باوجود  بہت تلاش  کے اس  کاکوئی حوالہ نہیں مل سکا ۔ممکن ہے کہ   مولانا  نے اس نص قرآنی سے  استدلال   فرمایا  ہو جس  کو فقہا ء نے بطور قاعدہ  کلیہ  کے استعمال کیا  ہے یعنی قولہ تعالی و یحرم علیہم  الخبائث ۔ ضب  کی حرمت میں  حنفیہ  نے اس آیت  سے بھی استدلا ل کیا ہے ،کماصرح  بہ الشامی  فی الذبائح ص ۲١۳ج ۵اوریہ  ظاہر  ہے کہ حرام مغز  ایک ایسی چیز ہے کہ طبیعت سلیمہ کو  اس سے نفرت اور استقذار لازم ہے ،بہرحا  ل جب تک  کتب مذہب میں  اس کی حرمت  کی تصریح نہ ملےحنفی کے لئے  حرمت میں تامل کی گنجائش  ہے ،اور  عمل  میں  احتیاط  یہی  ہے کہ ترک  کیاجائے ۔پھرحاشیہ میں  ہے  لکھا ہے کہ بعد میں محترم  مولانا سعید احمد  صاحب  مفتی  مظاہر علوم  سہارنپور   مدظلہم  نے نظر فرمائی   تو  اس کا حوالہ انہوں نے  بتلایا  وہ بعینہ درج ذیل ہے۔ صرح  بہ الطحاوی علی الدرص ۳٦ج/۵حیث  قال وزید نخاع الصلب۔  

اس کے  بعد  لکھتے ہیں  چونکہ اب تصریح  مل گئی  ہے لہذا حکم  حرمت کا  کرنا  چاہئے ۔﴿امداد المفتین ص /۹۷١﴾

حضرت  مفتی  محمود  صاحب رحمہ اللہ حرام  اجزا کے  متعلق  لکھتے ہیں

 ( ويكره من الشاة الحيا ) مقصورا وهو الفرج ( والخصية والمثانة والذكر والغدة والمرارة والدم المسفوح ) لما روى الأوزاعي عن واصل بن جميلة عن مجاهد قال { كره رسول الله صلى الله تعالى عليه وسلم من الشاة الذكر والأنثيين والقبل والغدة والمرارة والمثانة والدم } قال الإمام الدم حرام وكره الستة ، وذلك لقوله عز وجل { حرمت عليكم الميتة والدم } فلما تناوله النص قطع بتحريمه وكره ما سواه ؛ لأنه مما تستخبثه الأنفس وتكرهه ، وهذا المعنى سبب الكراهة لقوله تعالى { ويحرم عليهم الخبائث } كما في التبيين  ۔       مجمع الأنهر في شرح ملتقى الأبحر (9/ 345)

     وزید  نخاع الصلب  اھ طحطاوی  ج۴ص /۳٦۰

عبارات بالا  سے  معلوم ہوا کہ آٹھ  چیزیں ممنوع  ہیں ،ایک حرام  ہے باقی مکرورہ  تحریمی  ہے ،ان سب کا کھانا  اور کھلانا  ناجائز  اور گناہ ہے۔اور جس سالن کے ساتھ ناجائز عضو کو ملاکر پکایا  ہے وہ  سالن بھی  ناپاک  ہوگیا ۔

                                                                                                              ﴿فتاوی محمودیہ  ص/۳۵۷ج/١۴﴾

  خلاصہ  یہ ہے کہ چونکہ حرام  مغز  کو اکثر  فقہا  ءنے حلال  جانور  کے  حرام اجزا  میں  شمارنہیں  کیاہے ، لہذا  ان کے نزدیک حرام  مغز  کا استعمال حرام نہیں ہے ،چنانچہ  امداد الاحکام ج۴ ص/۳١۲ ودیگر کتب سے اس کی حلت کی تائید ہوتی ہے حضرت مفتی  کفایت  اللہ صاحب رحمہ اللہ  نے لکھا  ہے  کہ حرام  مغز نہ  حرام  ہے نہ مکروہ  یونہی  بیچارہ  بدنام ہوگیا ہے۔

 جبکہ مذکورہ  بالا  تینوں  حضرات اوران کے  علاوہ  بعض  دیگر  حضرات  حرام مغز   کے استعمال کو مکروہ  قرار  دیتے  ہیں ۔

لہذا  یہ مسئلہ  فقہا کے درمیان  مختلف  فیہ  ہوگیاہے ۔ اس لئے احتیاط کا تقاضہ تو  یہی  ہے کہ اس  کو استعمال نہ کیاجائے ، پکانے سے پہلے صاف کرکے ہڈی سے نکالدیا جائے ۔ اور اگر کوئی  استعمال کرے یعنی صفائی کا اہتمام  نہ کرے ، اس پر بھی  حرام خوری کا فتوی  نہ لگایا جائے ۔یعنی اس مسئلہ میں جانبین کو  چاہئے  کہ تشدد سے بچتے ہوئے  اعتدال کا  راستہ  اختیار کرے۔                                                                                                              

حوالہ جات

( ويكره من الشاة الحيا ) مقصورا وهو الفرج ( والخصية والمثانة والذكر والغدة والمرارة والدم المسفوح ) لما روى الأوزاعي عن واصل بن جميلة عن مجاهد قال { كره رسول الله صلى الله تعالى عليه وسلم من الشاة الذكر والأنثيين والقبل والغدة والمرارة والمثانة والدم } قال الإمام الدم حرام وكره الستة ، وذلك لقوله عز وجل { حرمت عليكم الميتة والدم } فلما تناوله النص قطع بتحريمه وكره ما سواه ؛ لأنه مما تستخبثه الأنفس وتكرهه ، وهذا المعنى سبب الكراهة لقوله تعالى { ويحرم عليهم الخبائث } كما في التبيين  ۔       مجمع الأنهر في شرح ملتقى الأبحر (9/ 345)
     وزید  نخاع الصلب  اھ طحطاوی  ج۴ص /۳٦۰

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

 دارالافتاء جامعة الرشید    کراچی

۲ربیع  الثانی  ١۴۴۴ھُ

n

مجیب

احسان اللہ شائق

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے