021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
قبضہ سے پہلےمکان بیچنا
57175خرید و فروخت کے احکامخرید و فروخت کے جدید اور متفرق مسائل

سوال

مسئلہ ذیل میں شرعی وضاحت مطلوب ہے: ایک بندے نے ایک buildingکا پورا floor خریدا جس میں چار مکانات ہیں، دو بڑے اور دو چھوٹے ہیں۔اس کی کل قیمت 5ملین( 50 لاکھ۔۔از مجیب) ہے، جوکہ 3 ماہ میں تین حصوں میں ادا کرنی ہے۔ پہلے ماہ میں 15 لاکھ دے دیئے۔ اس کے بعد خریدنے والے نے بروکر سے کہا کہ 4 میں سے 2 کے لیے خریدار ڈھونڈنا شروع کردو۔اب وہ بروکر خریدار لے کر آگیا تو بغیر قبضہ کے اس خریدار کو یہ دو مکان بیچنا جائز ہے یا نہیں؟ سائل: محمد وقاص، گلشن اقبال کراچی،03218257496

o

مکان کو قبضہ سے پہلے بیچنا چونکہ شرعا جائز ہے اس لیے مذکورہ مسئلہ میں بغیر قبضہ کے دو مکان خریدا ر کوبیچناجائز ہے۔

حوالہ جات

مجلة الأحكام العدلية (ص: 52) (المادة 353) للمشتري أن يبيع المبيع لآخر قبل قبضه إن كان عقارا وإلا فلا تحفة الفقهاء (3/ 51) وَإِذا بيع سفل عقار دون علوه أَو علوه دون سفله تجب الشعفة أما فِي بيع السّفل فَلَا يشكل لِأَنَّهُ عقاروَأما فِي بيع الْعُلُوّ وَحده فَقِيَاس واستحسان لِأَنَّهُ لَيْسَ بعقار وَلَكِن فِي مَعْنَاهُ لِأَن حق التعلي يتَعَلَّق بالبقعة على التأييد فَهُوَ بِمَنْزِلَة الْبقْعَة
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔