021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
عربی سیکھنےکےلیے عربی یاتاریخی ویڈیوزدیکھنا
..جائز و ناجائزامور کا بیانجائز و ناجائز کے متفرق مسائل

سوال

کیاعربی سیکھنے کے لیے عربی فلمیں یاتاریخی فلمیں دیکھناجائزہے؟ بایں معنی کہ اگر عورت کی تصویرآجائے تو اس سے نظر ہٹائی جائے ، اگر یہ ناجائز ہے تو کیا شوشل میڈیا کا بھی یہی حکم ہے جس میں عامۃ الناس مبتلی ہے؟

o

عربی سیکھنے کےلیے عربی یاتاریخی ویڈیوز دیکھنےمیں دوباتیں قابلِ تحقیق ہیں :نمبرایک ڈیجیٹل تصویر کا مسئلہ،نمبردو ویڈیوز میں موجود خواتین کی تصاویرکا مسئلہ۔ جہاں تک پہلے مسئلہ کا تعلق ہے توڈیجیٹل تصویر کے متعلق علماءِ عصر کی تین رائے ہیں: پہلی رائے یہ ہےکہ ڈیجیٹل تصویر چونکہ تصویرنہیں، بلکہ ظل یا عکس کے مشابہ ہے، لہذاجائز مقصد کےلیے اس کا استعمال جائزہوگا،بشرطیکہ عورت کی تصویر نہ ہو،سترچھپاہواہو۔ دوسری رائے یہ ہے کہ یہ عام پرنٹ تصویروں کی طرح حرام تصویرہے ،اس رائےکے مطابق عربی سیکھنے کے لیے اس کواستعمال کرنا جائزنہیں ہوگا۔ تیسری رائے یہ ہے کہ یہ اگرچہ تصویرہے، لیکن ضرورت کے وقت اس کااستعمال جائزہےجیسے جہاد کی ضروریات،تعلیمی ضروریات وغیرہ وغیرہ،اس رائے کے مطابق بھی عربی سیکھنے کےلیے اس کے استعمال کی گنجائش نکلتی ہے۔ ان تین آراء میں جس کی رائے پر زیادہ اعتمادہو اس پر عمل کیاجاسکتاہے، البتہ بہتر یہ ہے کہ علماء کے اختلاف سے بچا جائے، اورعربی سیکھنے کے لیے غیر ذی روح کی تصاویر والے ویڈیوزسے استفادہ کیاجائے ۔ جہاں تک دوسرےمسئلہ کا تعلق ہے کہ ویڈیوز میں کوئی بے پردہ عورت ہوتو اس کوکوئی بھی جائز نہیں کہتا،جن کے ہاں ذی روح کی ویڈوز دیکھناجائز ہے وہ بھی یہ قید لگاتے ہیں کہ اس میں بےپردہ عورت کی تصویر نہ ہو،لہذا یاتو ان تصاویر سے چہرہ مٹایا گیا ہواورجسم کاکوئی اورحصہ بھی کھلانہ ہو یا اس میں سرے سےعورت کی تصاویر ہی نہ ہوں ،یا کم از کم بڑی شدت کےساتھ اس بات کا اہتمام ہوکہ عورت کی تصویر آنے پرفوراً نظر ہٹالی جائےیا ونڈومنی مائزکی جائے۔اوریہ حکم تمام ڈیجیٹل ویڈیوز کا ہے۔

حوالہ جات

الموسوعۃ الفقھیۃ الکویتیۃ( 12/113) التَّصْوِيرُ لِلْمَصْلَحَةِ كَالتَّعْلِيمِ وَغَيْرِهِ : 39 - لَمْ نَجِدْ أَحَدًا مِنَ الْفُقَهَاءِ تَعَرَّضَ لِشَيْءٍ مِنْ هَذَا ، عَدَا مَا ذَكَرُوهُ فِي لُعَبِ الأَطْفَالِ : أَنَّ الْعِلَّةَ فِي اسْتِثْنَائِهَا مِنَ التَّحْرِيمِ الْعَامِّ هُوَ تَدْرِيبُ الْبَنَاتِ عَلَى تَرْبِيَةِ الأَطْفَالِ كَمَا قَالَ جُمْهُورُ الْفُقَهَاءِ ، أَوِ التَّدْرِيبُ وَاسْتِئْنَاسُ الأَطْفَالِ وَزِيَادَةُ فَرَحِهِمْ لِمَصْلَحَةِ تَحْسِينِ النُّمُوِّ كَمَا قَالَ الْحَلِيمِيُّ ، وَأَنَّ صِنَاعَةَ الصُّوَرِ أُبِيحَتْ لِهَذِهِ الْمَصْلَحَةِ ، مَعَ قِيَامِ سَبَبِ التَّحْرِيمِ ، وَهِيَ كَوْنُهَا تَمَاثِيلَ لِذَوَاتِ الأَرْوَاحِ . وَالتَّصْوِيرُ بِقَصْدِ التَّعْلِيمِ وَالتَّدْرِيبِ نَحْوُهُمَا لا يَخْرُجُ عَنْ ذَلِكَ . الْقِسْمُ الثَّالِثُ : اقْتِنَاءُ الصُّوَرِ وَاسْتِعْمَالُهَا : 40 - يَذْهَبُ جُمْهُورُ الْعُلَمَاءِ إِِلَى أَنَّهُ لا يَلْزَمُ مِنْ تَحْرِيمِ تَصْوِيرِ الصُّورَةِ تَحْرِيمُ اقْتِنَائِهَا أَوْ تَحْرِيمُ اسْتِعْمَالِهَا ، فَإِِنَّ عَمَلِيَّةَ التَّصْوِيرِ لِذَوَاتِ الأَرْوَاحِ وَرَدَ فِيهَا النُّصُوصُ الْمُشَدَّدَةُ السَّابِقُ ذِكْرُهَا ، وَفِيهَا لَعْنُ الْمُصَوِّرِ ، وَأَنَّهُ يُعَذَّبُ فِي النَّارِ ، وَأَنَّهُ أَشَدُّ النَّاسِ أَوْ مِنْ أَشَدِّ النَّاسِ عَذَابًا . وَلَمْ يَرِدْ شَيْءٌ مِنْ ذَلِكَ فِي اقْتِنَاءِ الصُّوَرِ ، وَلَمْ تَتَحَقَّقْ فِي مُسْتَعْمِلِهَا عِلَّةُ تَحْرِيمِ التَّصْوِيرِ مِنَ الْمُضَاهَاةِلِخَلْقِ اللَّهِ تَعَالَى . الموسوعۃ الفقھیۃ الکویتیۃ( 12/117) اسْتِعْمَالُ وَاقْتِنَاءُ الصُّوَرِ الْمُسَطَّحَةِ : 45 - يَرَى الْمَالِكِيَّةُ وَمَنْ وَافَقَهُمْ أَنَّ اسْتِعْمَالَ الصُّوَرِ الْمُسَطَّحَةِ لَيْسَ مُحَرَّمًا ، بَلْ هُوَ مَكْرُوهٌ إِنْ كَانَتْ مَنْصُوبَةً ، فَإِِنْ كَانَتْ مُمْتَهَنَةً فَاسْتِعْمَالُهَا خِلافُ الأَوْلَى النَّظَرُ إِِلَى الصُّوَرِ : 58 - يَحْرُمُ التَّفَرُّجُ عَلَى الصُّوَرِ الْمُحَرَّمَةِ عِنْدَ الْمَالِكِيَّةِ وَالشَّافِعِيَّةِ . لَكِنْ إِِذَا كَانَتْ مُبَاحَةَ الاسْتِعْمَالِ - كَمَا لَوْ كَانَتْ مَقْطُوعَةً أَوْ مُهَانَةً - فَلا يَحْرُمُ التَّفَرُّجُ عَلَيْهَا . قَالَ الدَّرْدِيرُ فِي تَعْلِيلِ تَحْرِيمِ النَّظَرِ : لأَنَّ النَّظَرَ إِِلَى الْحَرَامِ حَرَامٌ (3) . وَلا يَحْرُمُ النَّظَرُ إِِلَى الصُّورَةِ الْمُحَرَّمَةِ مِنْ حَيْثُ هِيَ صُوَرٌ عِنْدَ الْحَنَابِلَةِ . وَنَقَلَ ابْنُ قُدَامَةَ أَنَّ النَّصَارَى صَنَعُوا لِعُمَرَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ حِينَ قَدِمَ الشَّامَ طَعَامًا فَدَعَوْهُ ، الموسوعۃ الفقھیۃ الکویتیۃ( 12/123) فَقَالَ : أَيْنَ هُوَ ؟ قَالَ : فِي الْكَنِيسَةِ . فَأَبَى أَنْ يَذْهَبَ : وَقَالَ لِعَلِيٍّ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ : امْضِ بِالنَّاسِ فَلْيَتَغَدَّوْا . فَذَهَبَ عَلِيٌّ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ بِالنَّاسِ فَدَخَلَ الْكَنِيسَةَ ، وَتَغَدَّى هُوَ وَالنَّاسُ ، وَجَعَلَ عَلِيٌّ يَنْظُرُ إِِلَى الصُّوَرِ ، وَقَالَ : مَا عَلَى أَمِيرِ الْمُؤْمِنِينَ لَوْ دَخَلَ فَأَكَلَ (1) . وَلَمْ نَجِدْ نَصًّا عِنْدَ الْحَنَفِيَّةِ فِي ذَلِكَ . لَكِنْ قَالَ ابْنُ عَابِدِينَ : هَلْ يَحْرُمُ النَّظَرُ بِشَهْوَةٍ إِِلَى الصُّورَةِ الْمَنْقُوشَةِ ؟ مَحَلُّ تَرَدُّدٍ ، وَلَمْ أَرَهُ ، فَلْيُرَاجَعْ . فَظَاهِرُهُ أَنَّهُ مَعَ عَدَمِ الشَّهْوَةِ لا يَحْرُمُ . عَلَى أَنَّهُ قَدْ عُلِمَ مِنْ مَذْهَبِ الْحَنَفِيَّةِ دُونَ سَائِرِ الْمَذَاهِبِ : أَنَّ الرَّجُلَ إِِذَا نَظَرَ إِِلَى فَرْجِ امْرَأَةٍ بِشَهْوَةٍ ، فَإِِنَّهَا تَنْشَأُ بِذَلِكَ حُرْمَةُ الْمُصَاهَرَةِ ؛ لَكِنْ لَوْ نَظَرَ إِِلَى صُورَةِ الْفَرْجِ فِي الْمِرْآةِ فَلا تَنْشَأُ تِلْكَ الْحُرْمَةُ ؛ لأَنَّهُ يَكُونُ قَدْ رَأَى عَكْسَهُ لا عَيْنَهُ . فَفِي النَّظَرِ إِِلَى الصُّورَةِ الْمَنْقُوشَةِ لا تَنْشَأُ حُرْمَةُ الْمُصَاهَرَةِ مِنْ بَابٍ أَوْلَى (2) . 59 - وَعِنْدَ الشَّافِعِيَّةِ : لا يَحْرُمُ النَّظَرُ - وَلَوْ بِشَهْوَةٍ - فِي الْمَاءِ أَوِ الْمِرْآةِ . قَالُوا : لأَنَّ هَذَا مُجَرَّدُ خَيَالِ امْرَأَةٍ وَلَيْسَ امْرَأَةً . وَقَالَ الشَّيْخُ الْبَاجُورِيُّ : يَجُوزُ التَّفَرُّجُ عَلَى صُوَرِ حَيَوَانٍ غَيْرِ مَرْفُوعَةٍ . أَوْ عَلَى هَيْئَةٍ لا تَعِيشُ مَعَهَا ، كَأَنْ كَانَتْ مَقْطُوعَةَ الرَّأْسِ أَوِ الْوَسَطِ ، أَوْ مُخَرَّقَةَ الْبُطُونِ . قَالَ : وَمِنْهُ يُعْلَمُ جَوَازُ التَّفَرُّجِ عَلَى خَيَالِ الظِّلِّ الْمَعْرُوفِ ؛ لأَنَّهَا شُخُوصٌ مُخَرَّقَةُ الْبُطُونِ (1) . وَفِي صَحِيحِ الْبُخَارِيِّ عَنْ عَائِشَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهَا قَالَتْ : " قَالَ لِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : أُرِيتُكِ فِي الْمَنَامِ ، يَجِيءُ بِكَ الْمَلَكُ فِي سَرَقَةٍ مِنْ حَرِيرٍ ، فَقَالَ لِي : هَذِهِ امْرَأَتُكَ ، فَكَشَفْتُ عَنْ وَجْهِكِ الثَّوْبَ ، فَإِِذَا أَنْتِ هِيَ " (2) قَالَ ابْنُ حَجَرٍ : عِنْدَ الآجُرِّيِّ مِنْ وَجْهٍ آخَرَ عَنْ عَائِشَةَ : < لَقَدْ نَزَلَ جِبْرِيلُ بِصُورَتِي فِي رَاحَتِهِ حِينَ أَمَرَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يَتَزَوَّجَنِي > فَفِي هَذَا الْحَدِيثِ نَظَرُ الرَّجُلِ إِِلَى الْمَرْأَةِ الَّتِي يَحِلُّ لَهُ النَّظَرُ إِلَيْهَا ، مَا لَمْ تَكُنِ الصُّورَةُ مُحَرَّمَةً ، عَلَى مَا تَقَدَّمَ مِنَ التَّفْصِيلِ وَالْخِلافِ . وَاللَّهُ أَعْلَمُ .
..

n

مجیب

سید حکیم شاہ صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔