021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
ماسک پر وضو کرنے کا حکم
..پاکی کے مسائلوضوء کے فرائض

سوال

اگر کسی شخص نے دشمن کے خوف سے یا جاسوسی کیلئے نقلی ماسک پہن رکھا ہو ، اور پھر اس پر وضو کرے تو کیا اس طرح وضو کرنا صحیح ہے ؟

o

وضو میں چہرہ دھونا فرض ہے، لہذا اگر ماسک واٹر پروف ہو تو اسے پہن کر وضو صحیح نہیں۔ اس لئے ضروری ہے کہ وضو کرتے وقت ماسک اتار لیاجائے۔ ممکنہ حل یہ ہو سکتا ہے کہ ایسا ماسک استعمال کیا جائے جس میں پانی سرایت کر سکتا ہوتاکہ چہرے تک پا نی پہنچ جائے اور چند قطرے ٹپک جائیں اس طرح "غسل" کا معنی متحقق ہو گا اور وضو درست ہو جائے گا۔

حوالہ جات

القرآن [المائدة/6] "يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آَمَنُوا إِذَا قُمْتُمْ إِلَى الصَّلَاةِ فَاغْسِلُوا وُجُوهَكُمْ وَأَيْدِيَكُمْ إِلَى الْمَرَافِقِ وَامْسَحُوا بِرُءُوسِكُمْ وَأَرْجُلَكُمْ إِلَى الْكَعْبَيْنِ " شرح معاني الآثار - (ج 1 / ص 53) عن عمرو بن عبسة قال : { قلت يا رسول الله كيف الوضوء ؟ قال : إذا توضأت فغسلت يديك ثلاثا خرجت خطاياك من بين أظفارك وأناملك ، فإذا مضمضت واستنشقت في منخريك وغسلت وجهك وذراعيك إلى المرفقين وغسلت رجليك إلى الكعبين اغتسلت من عامة خطاياك } الاختيار لتعليل المختار - (ج 1 / ص 1) وفرضه: غسل الوجه، وغسل اليدين مع المرفقين، ومسح ربع الرأس، وغسل الرجلين مع الكعبين. الدر المختار للحصفكي - (ج 1 / ص 103) (غسل الوجه) أي إسالة الماء مع التقاطر ولو قطرة. وفي الفيض: أقله قطرتان في الاصح (مرة) لان الامر لا يقتضي التكرار (وهو) مشتق من المواجهة
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔