021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
"اگر تمہاری بہو میکے گئی تو تم کو طلاق” کا حکم
69966طلاق کے احکامطلاق کو کسی شرط پر معلق کرنے کا بیان

سوال

اگر زید اپنی بیوی سے کہہ دے کہ اگر تمہاری بہو اپنے میکے گئی تو تم کو طلاق،کیا اس صورت میں اگر اس کی بہو میکے جائے گی تو زید کی بیوی کو طلاق واقع ہوجائے گی؟

o

مذکورہ صورت میں اس بہو کے میکے جانے سے زید کی بیوی کو ایک طلاق رجعی واقع ہوجائے گی،جس کے بعد عدت گزرنے سے پہلے زیدنئے نکاح کے بغیررجوع کرسکتا ہے۔

حوالہ جات

"الدر المختار " (3/ 355):
"(وتنحل) اليمين (بعد) وجود (الشرط مطلقا) لكن إن وجد في الملك طلقت وعتق وإلا لا".
"مجمع الأنهر في شرح ملتقى الأبحر ": (ج 3 / ص 285) :
"( فإن وجد الشرط فيه ) أي في الملك بأن كان النكاح قائما أو كان في العدة (انحلت اليمين ووقع الطلاق ".

واللہ سبحانہ وتعالی اعلم بالصواب

محمد طارق

دارالافتاءجامعۃالرشید

21/محرم 1442ھ

n

مجیب

محمد طارق صاحب

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔