021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
قبر سے نکالی ہوئی مٹی کاحکم
70784جنازے کےمسائلجنازے کے متفرق مسائل

سوال

۔جناب مفتی  صاحب   قبر سے  متعلق یہ   سوال ہے کہ اکثر   علاقوں  میں  لوگ  کہتے  ہیں  کہ   اس  قبر سے  جتنی  مٹی نکالی  گئی  ہے  سب  اسی  میت کاحق  ہے ،کیا  یہ عقیدہ   درست  ہے  یانہیں ؟

o

۔یہ عقیدہ   رکھنا درست نہیں کہ  قبر سے  نکالی ہوئی  مٹی کے ساتھ میت کا حق اس طرح  متعلق ہوجاتا ہے  کہ  اس کو  اسی  قبر  پر واپس ڈالنا ضروری ہے ، اگرچہ اس قبر کی ضرورت پوری ہوچکی ہو ۔بلکہ صحیح بات یہ ہے کہ مسنون طریقہ  سے قبر کھود کر  مٹی  باہر  نکا لی جائے گی ،  پھر  میت  کو قبر میں  رکھنے کے بعد   اوپر  سلیپ  رکھ کر   مٹی ڈالی جائے گی ،اس کے بعد   قبر کو  زمین سے تقریبا ایک بالشت  اونچا کرکے  کوہان  نما بنایا جائے گا،  اس کےبعد پانی کا چھڑ کاؤ کیا جائے ،اگر قبرسے نکالی ہوئی کچھ  مٹی بچ جائے اس کو  قبرستان ہی میں  چھوڑ دیا جائے ۔

البتہ شرعی  طریقہ پردفن ہونے  کے  بعد میت  کاحق  قبر کے ساتھ  متعلق ہوجاتا ہے  کہ اس کو قبر سے نکالنا جائز نہیں ، اور جب تک اس کاجسم یا اس کے اجزا باقی ہوں میت کو قبر سے بلاضرورت  نکالنا  جائز نہیں ۔

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (2/ 233)
وما يفعله جهلة الحفارين من نبش القبور التي لم تبل أربابها، وإدخال أجانب عليهم فهو من المنكر الظاهر، وليس من الضرورة المبيحة لجمع ميتين فأكثر ابتداء في قبر واحد قصد دفن الرجل مع قريبه أو ضيق المحل في تلك المقبرة مع وجود غيرها، وإن كانت مما يتبرك بالدفن فيها فضلا عن كون ذلك ونحوه مبيحا للنبش، وإدخال البعض على البعض قبل البلى مع ما فيه من هتك حرمة الميت الأول، وتفريق أجزائه، فالحذر من ذلك اهـ:    

             احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

       دارالافتاء جامعة الرشید     کراچی

٦ جمادی  الاولی ١۴۴۲ھ

 

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔