021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
مانع حمل دواؤں کا استعمال
55301جائز و ناجائزامور کا بیانخاندانی منصوبہ بندی

سوال

کیا فرماتے ہیں علماء دین اس مسئلہ کے بارے میں کہ بہت سی عورتوں کو دیکھا گیا ہے کہ بچے کی پیدائش کےبعد کچھ عرصہ کے لئے انجکشن یاٹبیلٹ کا استعمال کرتی ہے ۔تاکہ بچے کی پیدائش میں کچھ عرصہ کے لئے وقفہ رہے تو کیا عورتوں اس طرح انجکشن اور یاٹبیلٹ استعمال کرنا شرعا درست ہے یا نہیں ؟قرآن وحدیث کی روشنی میں جواب مرحمت فرمائیں

o

اگر کمزوری کی وجہ سے حمل کی برداشت نہ ہو تو بطور علاج ایسی تدبیر اختیار کرنا کہ قوت آنے تک حمل نہ ٹھہرےتو یہ درست ہے ،بچوں کی پیدائش میں مناسب وقفے کےلئے مختلف دوائیں دستیاب ہیں، شوہر کی اجازت سے ان کاستعمال جائز ہے،لیکن آج کے دور میں بچے کم پیداکرنے کا جو رواج ہے ،اس کے پیچھے یہ نظریہ کا ر فرماہے کہ زیادہ بچے معاشی بوجھ ہیں ،یہ نظریہ قرآن وحدیث کی تعلیمات کے خلاف ہے،کیونکہ رزق تو اللہ تعالی کے اختیار میں ہے ، وہی والدین اور بچے سب کو روزی دیتا ہے ،لہذا اس نظریہ کے تحت مانع حمل دواؤں کا استعمال بھی جائز نہیں ۔

حوالہ جات

مشكاة المصابيح للتبريزي (2/ 222) إن رجلا أتى رسول الله صلى الله عليه و سلم فقال : " إن لي جارية هي خادمتنا وأنا أطوف عليها وأكره أن تحمل فقال : " اعزل عنها إن شئت فإنه سيأتيها ما قدر لها " . فلبث الرجل ثم أتاه فقال : إن الجارية قد حبلت فقال : " قد أخبرتك أنه سيأتيها ما قدر لها " . رواه مسلم بدائع الصنائع في ترتيب الشرائع (2/ 334) ويكره للزوج أن يعزل عن امرأته الحرة بغير رضاها؛ لأن الوطء عن إنزال سبب لحصول الولد، ولها في الولد حق، وبالعزل يفوت الولد، فكأنه سببا لفوات حقها، وإن كان العزل برضاها لا يكره؛ لأنها رضيت بفوات حقها، ولما روي عن رسول الله - صلى الله عليه وسلم - أنه قال: «اعزلوهن أو لا تعزلوهن إن الله تعالى إذا أراد خلق نسمة، فهو خالقها»۔ تفسير النسفي = مدارك التنزيل وحقائق التأويل (2/ 255) وَلَا تَقْتُلُوا أَوْلَادَكُمْ خَشْيَةَ إِمْلَاقٍ نَحْنُ نَرْزُقُهُمْ وَإِيَّاكُمْ إِنَّ قَتْلَهُمْ كَانَ خِطْئًا كَبِيرًا (31) {وَلا تَقْتُلُوا أَوْلادَكُمْ} قتلهم أولادهم وأدهم بناتهم {خَشْيَةَ إِمْلاقٍ} فقر {نَّحْنُ نَرْزُقُهُمْ وَإِيَّاكُمْ} نهاهم عن ذلك وضمن أرزاقهم {إِنَّ قَتْلَهُمْ كَانَ خطأ كَبِيراً} إثماً عظيماً۔
..

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔