021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
دلال کی اجرت
56/56966اجارہ یعنی کرایہ داری اور ملازمت کے احکام و مسائلکرایہ داری کے متفرق احکام

سوال

مفتی صاحب! عرض یہ کرنا تھا کہ جو لوگ گاڑیوں کا کام کرتے ہیں ، تو ان کے یہا ں یہ بات طے ہوتی ہے کہ جس نے گاڑی بکوائی تو وہ مالک سے 5000 روپے لے گا اور جس کو دلوائی اس سے بھی اتنے ہی لےگا ، تو اس طرح سے پیسے متعین کرنا صحیح ہے؟ اور ایک اصول یہ بھی ہے کہ جس کی دوکان پر گاڑی کھڑی کرکے بیچی ہے اس شوروم والے کو بھی متعین پیسے دے گا، تو کیا یہ صحیح ہے؟

o

دلال کے لیے جانبین (جس کی گاڑی بکوائی اور جس کو دلوائی) سے متعین اجرت لینا جائز ہےلہذا پوچھے گئے سوال میں 5ہزار کی رقم چونکہ متعین ہے، اس لیے لینا جائز ہے۔ جس کی دوکان پر گاڑی کھڑی کرکے بیچی ہے اس شوروم والے کو بھی متعین پیسے دینا جائز ہے اس لیے کہ اس جگہ کا کرایہ ہے جو اس نے استعمال کی ہے۔

حوالہ جات

الدر المختار (4/ 560) وأما الدلال فإن باع العين بنفسه بإذن ربها فأجرته على البائع وإن سعى بينهما وباع المالك بنفسه يعتبر العرف وتمامه في شرح الوهبانية. حاشية ابن عابدين (رد المحتار) (4/ 560) (قوله: يعتبر العرف) فتجب الدلالة على البائع أو المشتري أو عليهما بحسب العرف جامع الفصولين.
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔