021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
گمشدہ چیز کے ملنے پر مالک سے مال طلب کرنا
..القرآنالفاتحہ

سوال

ہمارے ہاں ایک رسم ہے، کہ جب کسی کی کوئی چیز گم ہو اور وہ بہت پریشان ہو پھر کسی کو ملے تو وہ کہتا ہے کہ مجھے (چتوکی) دو۔ مطلب کہ مجھے ملی ہے میں آپ کو دوں گا ، لیکن پہلے کچھ دو جو بھی ہو دس روپے سے لے کر جس کا جو مطالبہ ہو کیا یہ پیسے حلال ہوں گے؟

o

جب کسی کی کوئی چیز کسی کو مل جائے تو اس کے لیے ضروری ہے کہ اسے مالک کو لوٹادے اور اس پر کچھ مانگنا درست نہیں، ہاں وہ اپنی مرضی سے بطور انعام وتبرع کچھ دے تو لینے میں حرج نہیں۔

حوالہ جات

قال الامام المرغینانی رحمہ اللہ: اللقطة أمانة إذا أشهد الملتقط أنه يأخذها ليحفظها ويردها على صاحبها .(الهداية :2/ 417) قال العلامۃ ابن عابدین رحمہ اللہ: (ولا شيء للملتقط) لمال أو بهيمة أو ضال (من الجعل أصلا) إلا بالشرط كمن رده فله كذا ، فله أجر مثله ت.تارخانية كإجارة فاسدة. (رد المحتار :4/ 280) قال العلامۃ ابن نجیم رحمہ اللہ: وأما كونها أمانة ؛ فلأن الأخذ على هذا الوجه مأذون فيه شرعا بل هو الأفضل عند العامة قيد بأخذها ليردها ؛ لأنه لو أقر أنه أخذها لنفسه يضمن بالإجماع.(البحر الرائق :5/ 163 ) قال العلامۃ ابن عابدین رحمہ اللہ: وفي كافي الحاكم: وإن عوضه شيئا فحسن.
..

n

مجیب

اسلام الدین صاحب

مفتیان

ابولبابہ شاہ منصور صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔