021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
مسبوق نمازکے کس حصہ تک جماعت میں شامل ہوسکتاہے؟
..نماز کا بیانمسبوق اور لاحق کے احکام

سوال

مسبوق سلام کے کون سے حصے تک نماز باجماعت میں شامل ہوسکتاہے اورسلام کےکس حصے میں وہ شامل نہیں ہوسکتا؟اگرسلام کے دروان نمازشروع کردے تواس کی نمازکاکیاحکم ہے؟

o

مسبوق مقتدی امام کے پہلے السلام کی”میم “سے پہلے تحریمہ کہہ کرجماعت میں شامل ہوسکتاہے،اوراس کی اقتداء صحیح ہوگی،اوراگرامام کے پہلے السلام کی”میم “ کے بعد تحریمہ کہہ کرشامل ہوتاہے تویہ اقتداءصحیح نہیں ہوگی،بلکہ اب دوبارہ سے تحریمہ کہہ کر اپنی نمازشروع کرے۔

حوالہ جات

رد المحتار (ج 1 / ص 505): ”قوله: (وتنقضي قدوة بالاول) أي بالسلام الاول.قال في التجنيس: الامام إذا فرغ من صلاته، فلما قال: السلام جاء رجل واقتدى به قبل أن يقول:”عليكم “لا يصير داخلا في صلاته، لان هذا سلام “.
..

n

مجیب

محمد اویس صاحب

مفتیان

مفتی محمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔