021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
سات بیٹوں کے درمیان تقسیم میراث
68334میراث کے مسائلمیراث کے متفرق مسائل

سوال

ایک شخص کا انتقال ہوا، اس نے اپنے ترکہ میں 70,000,00(ستر لاکھ روپے) کے قریب  بطور ترکہ چھوڑے ہیں اور اس شخص کی زندہ اولاد میں سے 7 بیٹے ، 2پوتے اور دو پوتیاں ہیں، کل 11 ہیں۔ اب70,000,00(ستر لاکھ)  کو کس طرح تقسیم کریں گے؟  مرحوم کے والدین ، دادا ، دادی ، نانا، اور نانی میں سے کوئی حیات نہیں ہے۔

o

                        مرحوم کے ترکہ سے تجہیز وتکفین کا خرچ نکالنے کے بعد اگر ان کے ذمہ قرض وغیرہ مالی واجبات ہوں تو وہ  ادا کیے جائیں گے پھر اگر انہوں نے کوئی وصیت کی ہو تو باقی ماندہ ترکہ کے ایک تہائی تک اسے پورا کیا جائےگا، پھر جو ترکہ بچ جائے، اس کو سات برابر حصوں میں تقسیم کرکے میت کےانتقال کے وقت زندہ اولاد میں سے ہر ہر بیٹے کوایک ایک حصہ دے دیا جائے گا بیٹوں کے ہوتے ہوئے پوتے، پوتیاں محجوب ہوتی ہیں ۔ فیصد کے اعتبار سے ہر بیٹے کو 14.285فیصد  ملے گا ۔ مسئلہ  یوں بنے گا:

                                                  مسئلہ 7

ميتـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

                                                                                                بیٹے7                                                                                                                                                    پوتے2                                                                                                                                                                           پوتیاں2

                                                                                                                                                                                                                            عصبہ                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                              محجوب                                                                                                                                                                                                                محجوب

ہر فرد کا حصہ:          1                                                                                                                                                                                                                                                                                 

ہر فرد كا فیصدی حصہ:             14.285%

حوالہ جات

قال سراج الدين السجاوندي الحنفي رحمه الله: أما العصبة بنفسه ...وهم أربعة أصناف: جزء الميت، وأصله، وجزء أبيه، وجزء جده، الأقرب فالأقرب، يرجّحون بقرب الدرجة ، أعني أولهم بالميراث جزء الميّت أي البنون ، ثم بنوهم وإن سفلو، ثم أصله أي الأب ثم الجد.(السراجي في الميراث:36) وقال أيضا:وبنات الابن كبنات الصلب، ولهن أحوال ست: النصف للواحدة...ويسقطن بالابن.(السراجي في الميراث:20)
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

ابولبابہ شاہ منصور صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔